• صارفین کی تعداد :
  • 8198
  • 11/20/2016
  • تاريخ :

اربعین کی تکریم وتعظیم (حصّہ پنجم )

محرم

وَ جَعَلْتَهُ سَیِّداً مِنَ السّادَةِ وَ قآئِداً مِنَ الْقادَةِ وَ ذآئِداً مِنْ الْذادَةِ
اور انہیں سادات اور بزرگوں میں سے قرار گیا اور انہیں پیشرو قائدین میں سے قرار دیا اور انہیں حق کا دفاع کرنے والوں سے قرار دیا۔
وَاَعْطَیْتَهُ مَواریثَ الاَْنْبِیاَّءِ وَ جَعَلْتَهُ حُجَّةً عَلى خَلْقِک مِنَ الاَْوْصِیاَّءِ
اور تو نے انہبں انبیاء علیہم السلام کا ورثہ عطا کیا اور انہیں ان اوصیاء میں سے قرار دیا جو تیری مخلوق پر تیری حجتیں ہیں
فَاَعْذَرَ فىِ الدُّعآءِ وَ مَنَحَ النُّصْحَ وَ بَذَلَ مُهْجَتَهُ فیک
انہوں نے لوگوں کو دعوت دینے میں کوئی بھی بہانہ کسی کے لئے نہیں چھوڑا اور بے دریغ خیرخواہی اور نصیحت کی اور تیری راہ میں اپنی جان کا نذرانہ پیش کیا
لِیَسْتَنْقِذَ عِبادَک مِنَ الْجَهالَةِ وَ حَیْرَةِ الضَّلالَةِ وَ قَدْ تَوازَرَ عَلَیْهِ مَنْ غَرَّتْهُ الدُّنْیا وَ باعَ حَظَّهُ بِالاَْرْذَلِ الاَْدْنى ؛
تاکہ تیرے بندوں کو جہالت و سرگردانی کے بھنور مبں گرفتار ہونے اور گمراہی کی وادی میں بھٹکنے سے و سرگرداتی سے نجات دیں اور دنیا کا فریب کھانے والی پستیوں کے عوض اپنا سرمایہ پستیوں کے عوض بیچنے والوں نے ان کے خلاف ایک دوسری کے ساتھ مل گئے۔
وَ شَرى آخِرَتَهُ بِالثَّمَنِ الاَْوْکسِ وَ تَغَطْرَسَ وَ تَرَدّى فى هَواهُ
اور انھوں نے اپنی آخرت کو نہایت پست قیمت پر بیچ ڈالا اور اپنے آپ کو ہوا و ہوس کے کنویں میں سرنگوں کردیا۔
وَاَسْخَطَک وَاَسْخَطَ نَبِیَّک
اور انھوں نے تجھ کو اور تیرے پیغمبر (ص) کو غصبناک کیا
وَ اَطاعَ مِنْ عِبادِک اَهْلَ الشِّقاقِ وَالنِّفاقِ وَ حَمَلَةَ الاَْوْزارِ
اور انھوں نے تیرے بندوں کے درمیان ان لوگوں کی پیروی کی جو دوگانگی اور نفاق (منافقت) والے تھے اور گناہ کے عظیم بوجھ اپنے کندھوں پر اٹھائے ہوئے تھے۔
الْمُسْتَوْجِبینَ النّارَ فَجاهَدَهُمْ فیک صابِراً مُحْتَسِباً حَتّى سُفِک فى طاعَتِک دَمُهُ وَاسْتُبیحَ حَریمُهُ
اور اسی بنا پر دوزخ کی آگ کے مستحق قرار پائے تھے آپ (ع) نے جب یہ سب کچھ دیکھا تو صبر و استقامت اور اللہ کی جزاء کی امید کے ساتھ ان کے خلاف جہاد کیا حتی کہ ان کا خون تیرے پیروی کی راہ میں زمین پر جاری ہوا اور ان کا مقدس حریم توڑ دیا گیا۔
اَللّهُمَّ فَالْعَنْهُمْ لَعْناً وَبیلاً وَ عَذِّبْهُمْ عَذاباً اَلیماً
بار خدایا! ان پر لعنت بھیج ایسی لعنت جو بال و پر رکھتی ہو (؟) اور انہیں دردناک عذاب میں مبتلا کردے۔
اَلسَّلامُ عَلَیْک یَابْنَ رَسُولِ اللَّهِ اَلسَّلامُ عَلَیْک یَابْنَ سَیِّدِ الاَْوْصِیاَّءِ
سلام ہو آپ پر اے فرزند رسول اللہ (ص) سلام ہو آپ پر اے سید الاصیاء کے فرزند
اَشْهَدُ اَنَّک اَمینُ اللهِ وَابْنُ اَمینِهِ عِشْتَ سَعیداً وَ مَضَیْتَ
میں گواہی دیتا ہوں کہ بتحقیق آپ خدا کے امین (امانت دار) اور خدا کے امانتدار کے فرزند ہیں آپ سعادتمند جئے اور دنیا سے رخصت ہوئے جبکہ دنیا آپ کی حمد و ستائش کی جا رہی ہے۔ ( جاری ہے )