• صارفین کی تعداد :
  • 3798
  • 11/26/2012
  • تاريخ :

حضرت شيخ مفيد کے اساتذہ اور شاگرد

حضرت شیخ مفید

شيعوں  کا ايک عظيم ستارہ

شيخ مفيد سے پہلے شيعوں کي حالت

شيخ مفيد شيعہ دانشمندوں کي نظر ميں

شيخ مفيد کي  تأليفات

شيخ مفيد کے اساتذہ

ايک بڑے محدث جناب حاجي مرزا حسين نوري نے اپني ايک کتاب  "خاتمه مستدرك الوسايل" ميں شيخ مفيد کے تقريبا پچاس اساتذہ کا ذکر کيا ہے   اور نئي  چھپنے والي کتاب  کے مقدمہ ميں يہ تعداد 59  تک پہنچي ہے -  يہ بھي ممکن ہے کہ شيخ مفيد کے اساتذہ کي تعداد اس سے بھي کہيں زيادہ ہو -  حضرت شيخ مفيد نے ان اساتذہ سے جو کہ شيعہ ، سني اور زيدي تھے ، ان زمانے ميں رائج علوم يعني ادبيات عرب ، ، قرائت، كلام، فقه، اصول، حديث، تفسير، رجال وغيره کي تعليم حاصل کي - ان کے معروف اساتذہ ميں جعفربن محمد قولويه قمي محمد بن علي بن بابويه قمي (شيخ صدوق)، ابوعبدالله صفواني احمد بن محمد بن وليد قمي، ابوعبدالله مرزباني، ابوجعفر محمد بن حسين بزوفري، ابوغالب زراري، ابن جنيد اسكافي، ابوعلي صولي بصري، علي بن محمد رفاء، علي بن ابي الجيش بلخي و ابوعبدالله  وغيرہ وغيرہ شامل ہيں جو کہ تمام کے تمام اپنے زمانے کے رائج علوم ميں ماہر تصور کيے جاتے تھے -

حضرت  شيخ مفيد کے شاگر

ان کے شاگردوں کي  تعداد بھي بہت زيادہ ہے جن کا مختلف مذاھب سے تعلق تھا اور وہ اپنے زمانے کے معروف دانشمند بنے مگر بدقسمتي سے ہم تک ان کے شاگردوں کے 15 نام ہي پہنچے جن کا کتاب "بحارالانوار " کے مقدمے ميں ذکر کيا گيا ہے -  ان کے باقي شاگردوں کے بارے ميں درست طور پر کوئي خاص معلومات حاصل نہيں ہو سکي ہيں -  شيخ مفيد کے معروف شاگردوں ميں علم الهدي سيد مرتضي، ان کا غيرمعمولي ذہين بھائي  سيد رضي، شيخ طوسي، ابوالعباس نجاشي، ابوالفتح كراجكي، ان کا داماد  ابويَعْلي محمدبن حسن بن حمزه جعفري، سالار بن عبد العزيز ديلمي المعروف "سَلاّر"اور  جعفر بن محمد دوريستي    وغيرہ شامل تھے جو کہ تمام قابل افتخار شيعہ علماء  اور اسلامي علوم فنون کے اساتذہ شمار ہوتے تھے -

شعبۂ تحرير و پيشکش تبيان