• صارفین کی تعداد :
  • 4171
  • 2/8/2012
  • تاريخ :

بادل کا گيت

بادل

دنيا  پہ چھا  رہا  ہوں                                                                                                                       دھوميں  مچا  رہا  ہوں

موتي لٹارہا ہوں

لہراتا آ رہا ہوں

شہروں ميں گلشنوں ميں                                                                                                       کھيتوں ميں اور بنوں ميں

دريا بہا رہا ہوں

لہراتا آ رہا  ہوں

اٹھ   کر  سمندروں   سے                                                                                                         طوفاں  کے  منظروں  سے

خوشياں منا رہاہوں

لہراتا   آ  رہا  ہوں

آئي  ہيں  ميري  فوجيں                                                                                                               چھائي ہيں ميري  فوجيں

جھنڈے بڑھا رہا ہوں

لہراتا    آ  رہا   ہوں

اجڑي  فضا  ميں  آ  کر                                                                                                                   سوني   ہوا   ميں  آ   کر

بستي بسا رہاہوں

لہراتا   آ رہا  ہوں

اونچي    پہاڑيوں    پر                                                                                                                      پودوں  پہ  جھاڑيوں  پر

خيمے لگا رہا ہوں

لہراتا آ  رہا   ہوں

خوش ہيں کسا ن سارے                                                                                                               بوڑھے    جوان    سارے

نہريں بہا رہاہوں

لہراتا  آ رہا  ہوں

جھلسي ہو ئي زميں  پر                                                                                                                تپتي  ہو ئي   زميں   پر

سبزہ اگا رہا ہوں

لہراتا  آ رہا  ہوں

پودے   سنور   رہے   ہيں                                                                                                               جنگل   نکھر  رہے   ہيں

ميں منہ دھلارہا ہوں

لہراتا   آ  رہا   ہوں

آنگن    مرا    فضا    ہے                                                                                                                    جھولا   مرا   ہوا   ہے

پينگيں بڑھا رہا ہوں

لہراتا  آ  رہا  ہوں

باغوں ميں اور بنوں ميں                                                                                                                شاخوں کے دامنوں  ميں

کلياں کھلا رہاہوں

لہراتا  آ رہا  ہوں

شاعر کا نام : اختر شيراني

پيشکش: شعبہ تحرير و پبشکش تبيان


متعلقہ تحريريں:

چڑيوں کي شکايت