• صارفین کی تعداد :
  • 4457
  • 8/17/2009
  • تاريخ :

كوّا اور كبوتر (حصّہ ششم)

كوّا اور كبوتر

ہدہد نے چند لمحوں كے ليے غور كيا، پهر بولا: " بہت خوب، ميرے خيال ميں گهونسلا كبوتر كو ملنا چاہيے-" كوّے نے چاها كہ داد فرياد كرے مگر پرندوں نے اس كي ايك نہ چلنے دي اور سب نے كہا: هاں هاں، گهونسلا كبوتر كي ملكيت ہے اور كوّا اس سے بے دخل ہے، جہاں چاہں جائے-"

جب كوّے نے ديكها كہ سبهي ايك ہي بات كہه رہے ہيں وه سمجه گيا كہ اب اس كا زور نہيں چلے گا- چناں چہ وه خاموش ہوگيا- اب ہر پرنده كوّے كي بدتہذيبي اور كبوتر كي خوبيوں كا ذكر كر رها تها- تمام پرندے آپس ميں باتيں كر رہے تهے- اس موقع پر كبوتر ہدہد كے نزديك گيا اور سرگوشي كے انداز ميں بولا: " قاضي صاحب محترم! ميں آپ كي عنايت كا شكرگزار ہوں ليكن ميں آپ سے ايك بات پوچهنا چاہتا ہوں- آپ نے مجهے حق پر كيسے سمجها حال آنكہ كوّے كي طرح ميرے پاس بهي كوئي ثبوت نہ تها اور كوئي بهي حقيقت حال سے واقف تها-"

ہدہد بولا: " تم نے ٹهيك كہا، سوائے تمهارے اور كوّے كے كوئي بهي حقيقت سے واقف نہيں تها ليكن اس طرح كے معاملات ميں جب كوئي اور دليل موجود نہ ہو تو فيصلہ اس كے حق ميں ہوتا ہے جو زياده نيك نام ہو اور جس كا اخلاق بہتر ہو! جو اچهے تعلقات قائم ركهتا ہو اور كسي نے اس كے  یکہ سے  جهوٹ اور اس هاته سے ظلم نہ سنا ديكها ہو- تم راست گو كي حيثيت سے معروف ہو اور كوّا دروغ گو كي حيثيت سے بدنام ہے-"

                                                                                                                                                        جاری ہے

کتاب کا نام بے زبانوں کی زبانی
مولف مهدی آذریزدی
مترجم ڈاکٹر تحسین فراقی
پیشکش شعبۂ تحریر و پیشکش تبیان

 


متعلقہ تحریریں :

كوّا اور كبوتر (حصّہ دوّم)

كوّا اور كبوتر