• صارفین کی تعداد :
  • 4282
  • 8/4/2009
  • تاريخ :

كوّا اور كبوتر (حصّہ چهارم)

كوّا اور كبوتر

صرف داد فرياد كركے كس چيز كا حق ركهنا درست نہيں، حق كے حصول كا سيدها اور صاف معاملہ ہے- كوّے كو اگر كچه كہنا ہے تو قاضي سے جا كر شكايت كرے تا كہ وه معاملہ كي چهان بين كرے-

  كوّا بولا: " تم نے بهي وہي راگ لاپنا شروع كرديا- آخر ميرے مسئلے كا كيا حل ہے؟ " پرندے بولے، " كچه نہيں- جاؤ كسي عادل قاضي كا پتا چلاؤ مثلاًََ ہدہد جو حضرت سليمان (ع) كا مصاحب ہے اور عدل كے معني سے واقف ہے، اور وه جو حكم كركے اسے مان لو-"

  كوّا بولا: " ميں ہدہد كو نہيں جانتا-" پرندے بولے: " يہ تمہاري اپني غلطي ہے كہ تم اس قدر وحشي ہو وگرنہ ہدہد كو ہر كوئي واقف ہے- ہدہد منصف پرنده ہے- اس كے سر پر تاج ہے، صاحب خبر ہے اور اس قول قابلِ اعتبار ہے- ہم جاتے ہيں، اسے لے كر آتے ہيں-"

   پرندے گئے اور اسے بلا لائے- ہدہد آيا اور اس نے پوچها: كيا مسئلہ ہے ؟ كوّا بولا: " مجهے اس گهونسلے كو بنائے ہوئے ايك سال ہوگيا ہے- اب كبوتر آكر بلا اجازت اس ميں براجمان ہو گيا ہے-"

كبوتر بولا: " ميں ايك مدت سے اس گهونسلے ميں بيٹها ہوں اور ميں نے يہاں كوئي كوّا نہيں ديكها-"

كوّا بولا:" سب پرندے گواه ہيں كہ ميں كس قدر فرياد كي اورمجهے كتني تكليف ہوئي-"

كبوتر بولا: " سب پرند ے گواه ہيں كہ مجه پر كتنا ظلم ہوا- اس نے ميرے بچے كو گهونسلے سے ٹپخ ديا اور خود مجهے زدو كوب كرنا چا ہتا تها-"   

                                                                                                                                                          جاری ہے

کتاب کا نام بے زبانوں کی زبانی 
مولف مهدی آذریزدی 
مترجم  ڈاکٹر تحسین فراقی 
پیشکش شعبۂ تحریر و پیشکش تبیان 

                                                                                                                                                     


متعلقہ تحریریں :

حلال اور حرام کمائی کے اثرات

اخلاقی محبت