• صارفین کی تعداد :
  • 2418
  • 4/14/2009
  • تاريخ :

اسلامي ادب كي ترويج ميں اقبال كا كردار (حصّہ دوّم )

علامه اقبال

اقبال نے ادب اور شاعري كے بارے ميں اپنے تصورات كو تفصيل سے اپني شعري تصانيف ميں بيان كيا ہے. ان ساري تفاصيل كو سميٹنا تحصيل حاصل ہے . كيونكہ اقبال كے تصورات شعر و ادب پر متعدد مقالات و مضامين لکھے جا چكے ہيں . تاہم ان تصورات كا اجمالي ذكر بے محل نہ ہوگا. اس ضمن ميں اسرار خودي، زبور عجم ميں شامل بندگي نامہ اور ظرب كليم خصوصيت سے لايق توجہ  ہيں . اسرار ميں اقبال نے علم وفن كو حيات كے خادم اور خانہزاد قرارديا ہے." در حقيقت شعر و اصلاح ادبيات اسلاميہ" ميں انہوں نے بڑي تفصيل اور دلسوزي سے اعلي فضائل كو شعر وادب كا لازمہ اور جزواعظم قرار ديا ہے . ان كے نزديك شاعر كا سينہ حسن كا تجلي زار ہے . اس كے دم سے بلبل نوا آموز ہوتا ہے اور پھول كا رخسار اس كے غازے سے روشن ہوتا ہے . پھر اس قوم كا ماتم كرتے ہيں جس كا شاعر ذوق حيات سے منہ موڑ ليتا ہے . اس كا آئينہ بدصورت كو خوبصورت دكھاتا ہے. اس كا بوسہ پھول کی تازگي اور بلبل كے ذوق پرواز كو غارت كرديتا ہے . وہ سور سے رعنائي اور جرہ شاہين سے توانائي چھين ليتا ہے . وہ يوناني اساطير كي بنات البحر كي طرح جہازوں كي غرقابي كا باعث بنتا ہے . اس كے نزديك خواب،‌بيداري سے بہتر ہے . اقبال فرماتے ہيں كہ ايسے شاعر كے سايے بھی بچنا چاہيے:

از خم مينا و جامش الحذر
از می  آيينه فامش الحذر

كيونكہ اس كے نغمات دلوں کی حرارت کوسلب کرنے والے ہیں اور اس کے نتیجے میں تن آسانی اور ضعف اس قدر حاوی ہو جاتا ہے کہ ایسی شاعری کے متاثرین کو رگ گل سے باندھا اور نسیم سحر سے خستہ و خراب کیا جا سکتا ہے ۔ آخر میں شعر و سخن کی صلاحیت کے  حامل لوگوں کو تلقین کرتے ہیں کہ ان کا ادب فکر صالح سے فیض یاب ہونا چاہیے : 

اي ميان كيسہ ات نقد سخن

بر عيار زندگي او را بزن

فكر روشن بين عمل را رہبر است

چوں درخش برق پيش از تندر است

فكر صالح در ادب مي بايدت

رجعتي سوي عرب مي بايدت

مثل بلبل ذوق شيون تا كجا

در چمن زاران نشيمن تا كجا؟

اي ہما از يمن دامت ارجمند

آشيانے، برق و تندر در برے

از كنام جرہ بازاں برترے (1)

                                                                                                                                               جاری هے

ڈاکٹر تحسین فراقی

پیشکش : شعبۂ تحریر و پیشکش تبیان

1. كليات اقبال (فارسي) ص 39.