• صارفین کی تعداد :
  • 4899
  • 1/15/2008
  • تاريخ :

محرّم الحرام کی دسویں تاریخ

 

السلام علیک یا ابا عبدالله

10 محرم سنہ 1415 ھ۔ق کو دہشتگرد تنظیم مجاہدین خلق نے مشہد مقدس میں فرزند رسول حضرت امام رضا علیہ السلام کے روضۂ اقدس میں انتہائی انسانیت سوز جرم کا ارتکاب کیا ۔عاشور کی شام کو عزادار اور زائرین امام رضا ‎علیہ السلام  نواسۂ رسول حضرت امام حسین علیہ السلام کی عزاداری میں مصروف تھے کہ اس دہشتگرد تنظیم کے افراد نے فرزند رسول حضرت امام رضا ‎علیہ السلام  کے روضۂ اقدس میں ایک طاقتور بم کا دھماکہ کردیاجس میں دسیوں زائرین اور محبّان خاندان رسالت شہید ہوگئے ۔دھماکے سے امام رضا علیہ السلام  کی ضریح اقدس کو بھی نقصان پہنچااور درودیوار کے تاریخی کتبے اور قیمتی آرائشی فن پارے اکھڑگئے اور روضے کے اندر کے حصّوں کو نقصان پہنچا ۔

 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

10 محرم 1330 ھ۔ق کو ایران میں آئینی تحریک کے طرفدار مجاہد عالم دین ثق‎ۃ الاسلام تبریزی کو ان کے ساتھیوں کے ہمراہ پھانسی دی گئی ۔اس مجاہد عالم دین نے ابتدائی دینی تعلیم اپنے والد ماجد سے حاصل کی اور پھر اپنے دور کے بڑے اساتذہ سے فقہ واصول کی تعلیم حاصل کی ۔آئینی تحریک شروع ہوتے ہی آپ اس میں شامل ہوگئے ۔آپ چونکہ عمومی اور خصوصی اجتماعات میں لوگون کی بھلائی کی باتیں کرتے تھے ۔اس لیے دشمنوں نے آپ کے خلاف سازشیں شروع کردیں ۔آخرکار روسی فوجیوں نے آپ کو اور آپ کے ساتھیوں کو شہید کردیا ۔آپ کی کتابوں میں مرآت الکتب خاص طور پر قابل ذکر ہے ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

یا حسین

10 محرم سنہ 61 ھ۔ق کو میدان کربلا میں نواسۂ رسول حضرت امام حسین علیہ السلام نے اپنے بہتّر جاں نثاروں کے ہمراہ دین مقدس اسلام آزادی اور حریت کی پاسداری کے لئے بے مثال شجاعت و دلیری اور ایثار وفداکاری کا عظیم الشان مظاہرہ کرتے ہوئے اپنی جان قربان کردی اور اسلام کو زندۂ جاوید بنادیا ۔حضرت امام حسین علیہ السلام نے فرمایا : میں ایسے ذلّت آمیز ماحول میں موت کو سعادت و خوش نصیبی سمجھتا ہوں اور ستمگروں کے ساتھ زندگی گزارنے کو ذلت وبدبختی ۔

خواجہ معین الدین چشتی احمدی نے کیا خوب کہا ہے :

شاہ است حسین بادشاہ است حسین ، دین است حسین دین پناہ است حسین ،

سرداد نہ داد دست در دست یزید  ، حقّا کہ بنائے لاالہ است حسین ۔

 

دس محرم سنہ 1425 ھ۔ق کو عراق کے مقدس شہروں کاظمین اور کربلا میں بم دھماکے ہوئے ۔ان دھماکوں میں سینکڑوں بے گناہ عزادار شہید اور زخمی ہوگئے ۔اس سال عزادار عراق کی سابق صدام حکومت کی جانب سے عزاداری پر عائد پابندی کے سالہا سال کے بعدان مقدس مقامات پر بڑی عقیدت کے ساتھ عزاداری کے لیے اکٹھے ہوئے تھے ۔کربلا اور کاظمین میں یہ دھماکے عراق میں جاری اس بد امنی کا تسلسل تھے جس کا آغاز اپریل سنہ 2003 میں عراق پر امریکی و برطانوی حملوں سے ہوا تھا ۔یہی وجہ ہے کہ اگرچہ ان دہشتگردانہ حملوں میں ملوّث افراد منظر عام پر نہ آئے لیکن عراق کے عوام اور عالمی رائے عامہ امریکہ کو اس المیے کا ذمہ دار قرار دیتی ہے ،کیونکہ قابض ہونے کے ناتے امریکہ پر ہی عراقی عوام کی جانوں کے تحفّظ کی ذمہ داری عائد ہوتی ہے ۔