• صارفین کی تعداد :
  • 5123
  • 8/28/2013
  • تاريخ :

ٹيپو سلطان کي شير جيسي زندگي

ٹیپو سلطان کی شیر جیسی زندگی

ٹيپو سلطان برصغير کا اوّلين مجاہد آزادي (حصّہ اوّل)

ٹيپو سلطان برصغير کا اوّلين مجاہد زادي (حصّہ دوّم)

نپولين بوناپارٹ خود بھي ٹيپوسلطان کي حمايت و مدد کرنا چاہتا تھا کيونکہ انگريزوں سے اس کي دشمني تھي، نپولين نے ٹيپو کي مدد کے ليے بحري بيڑہ بھي روانہ کيا تھا ليکن بوجوہ اس کي آمد ميں تاخير ہوگئي-ٹيپو نے امن و امان کي برقراري، قانون کي بالادستي اور احترام کا نظام نہ صرف روشناس کرايا بلکہ سختي سے اس پر عملدرآمد بھي کروايا، جس سے رعايا کو چين و سکون اور رياست کے استحکام ميں مدد ملي- ٹيپوسلطان کا يہ قول کہ

 ’’گيدڑ کي سو سالہ زندگي سے شير کي ايک دن کي زندگي بہتر ہے‘‘

غيرت مند اور حميت پسندوں کے ليے قيامت تک مشعل راہ بنا رہے گا-

بے شک ٹيپو کے درباريوں نے اس کے ساتھ غداري کي- جنوبي ہند کي اس وقت کي عظيم طاقتيں نظام دکن اور مرہٹے اس کے خلاف صف آرا ہوئے جو ان کي مجبوري تھي ليکن ٹيپو کو سب سے زيادہ نقصان آستين کے سانپوں يعني مير قمرالدين، مير معين الدين، پورنيا، مير غلام لنگڑا اور مير صادق نے پہنچايا ورنہ ٹيپو ناقابل شکست تھا اور يقيناً اس مۆقف ميں تھا کہ انگريزوں کے قدم اکھاڑ ديتا اور برصغير ميں مسلمانوں کي حکومت برقرار رہتي-

ٹيپو سلطان اوائل عمر سے بہادر، حوصلہ مند اور جنگجويانہ صلاحيتوں کا حامل بہترين شہ سوار اور شمشير زن تھا- علمي، ادبي صلاحيت، مذہب سے لگاۆ، ذہانت، حکمت عملي اور دور انديشي کي خصوصيات نے اس کي شخصيت ميں چار چاند لگا ديے تھے، وہ ايک نيک، سچا، مخلص اور مہربان طبيعت ايسا مسلمان بادشاہ تھا جو محلوں اور ايوانوں کے بجائے رزم گاہ ميں زيادہ نظر آتا تھا-

ٹيپو خود عالم تھا اس ليے ادب نوازي اور اديب پروري اس کي سرشت ميں تھي، وہ عالموں، شاعروں، اديبوں اور دانشوروں کي قدر ومنزلت کرتا تھا، مطالعے اور اچھي کتابوں کا شوقين تھا، اس کي ذاتي لائبريري ميں لا تعداد ناياب کتابيں موجود تھيں، ٹيپوسلطان وہ پہلا مسلمان حکمران ہے جس نے اردو زبان کو باقاعدہ فروغ ديا اور دنيا کا سب سے پہلا اور فوجي اخبار جاري کيا تھا-

اس کے عہد ميں اہم موضوعات پر بے شمار کتابيں لکھي گئيں، وہ جدت پسند تھا، زندگي کے مختلف شعبوں ميں اس نے جدت پيدا کي مثلاً مہينوں کے نام تبديل کيے، شہروں کے اسلامي نام تجويز کيے، سکہ سازي کو عروج ديا، زراعت ميں جديد طريقے روشناس کرائے، بيرون مملک سے بيل، گھوڑے اور ديگر کارآمد جانور منگوا کر نئي نسليں متعارف کروائيں- نئي نسل ٹيپوسلطان کي شخصيت اور لازوال کارناموں سے مکمل طور پر آگاہ نہيں ہے اور وقت کا يہ اہم تقاضا ہے کہ برصغير کے اس پہلے مجاہد شہيد آزادي، عظيم بطل حريت کي زندگي اور کارناموں سے نئي نسل کو واقف کرايا جائے تاکہ ان ميں حريت فکر، حب الوطني اور جذبہ آزادي پروان چڑھے-(ختم)

 

بشکريہ ايکسپريس ڈاٹ پي کے


متعلقہ تحریریں:

افغاني :  قرآن کي تعليمات دوسري ہيں اور مسلمانوں کا عمل دوسرا ہے

مسلمان کو ہر ملک کو اپنا وطن اور ہر زمين کو اپنا گھر سمجھنا چاہئے