• صارفین کی تعداد :
  • 4060
  • 8/15/2012
  • تاريخ :

پلاسٹک سرجري  اور نيا زمانہ اور نئے  مسائل

پلاسٹک سرجری

پلاسٹک سرجري کے  ميدان ميں بيسويں صدي ميں غير معمولي پيش رفت ہوئي- کہا جاتا ہے  کہ برطانوي فوجي Walter Yeo غالباً پہلا شخص ہے  جس کے  چہرے  کي 1917ء ميں   Skin graft کے  ذريعہ کامياب سرجري کي گئي-

جنگ عظيم اول(18- 1914ء ) اپنے  ساتھ بھيانک تباہي لائي- بہت سے  لوگ اس ميں ہلاک ہوئے  اور ان سے  کہيں زيادہ تعداد ميں زخمي ہوئے- بہت سے  فوجي ہاتھ پيرسے  معذور ہو گئے- ان کے  بدن اور چہرے  جھلس گئے- اس موقع پر بہت سے  ممالک ميں  پلاسٹک سرجري کے  کامياب تجربے  ہوئے- يہي صورت حال جنگ عظيم دوم (45- 1939ء) کے  بعد بھي پيش آئي-

نيوزي لينڈ کے  سرجن ماہر امراض کان و حلق Sir Harold Delf Gillies (1882-1960) نے  ان لوگوں کے  ليے، جن کے  چہروں پرجنگ عظيم اول کے  درميان گہرے  زخم آئے  تھے  اور وہ مسخ ہو گئے  تھے ،جديدپلاسٹک سرجري کے  بہت سے  طريقوں کوترقي دي-

امريکہ ميں  Dr.Vilray Papin Blair(1871-1955) نے  جنگ عظيم اول کے  فوجيوں کے  جبڑوں اور چہروں  کو لاحق ہونے  والے  پيچيدہ زخموں  Complex Maxillofacial injuries کے  کامياب آپريشن کيے- اس کي کوششوں  سے  امريکي ملٹري ہاسپٹل ميں  پلاسٹک سرجري کا مستقل شعبہ قائم ہوا، جس کے  بعد برطانيہ، فرانس، کناڈا اور ديگر ممالک ميں  بھي اس طرح کے  شعبے  قائم ہوئے- جنگ عظيم دوم کے  بعد نيوزي لينڈ کے  سرجن   Sir Archibald McIndoe (1900-1960)نے  جو Sir Harold کا شاگرد تھا، Royal Air Force کے  فوجيوں کا ابتدائي علاج کيا،جن کے  بدن جھلس گئے  تھے-

امريکہ ميں چہرے  کي سرجري اورپلاسٹک سرجري سے  متعلق ايک انجمن قائم ہوئي جس کا نام تھا: American Association of Oral and Plastic Surgery- بعد ميں يہ انجمن دو ذيلي انجمنوں ميں تقسيم ہو گئي :

(1) American Association of Plastic Surgeons

(2)American Association of Oral and Maxillofacial Surgeons

ان تمام کوششوں اور خدمات کے  باوجودپلاسٹک سرجري طب کا ايک مخصوص اور محدود شعبہ تھا، جس کے  تحت جسماني عيوب و نقائص کي اصلاح کي جاتي تھي- جنگوں اور حادثات و آفات کے  مواقع پر تو پلاسٹک سرجري کے  ضرورت مند متاثرين کي تعداد بڑھ جاتي تھي، ليکن عام حالات ميں  ايسے  مريضوں کي تعداد زيادہ نہيں ہوتي تھي، ليکن جب سے  اس ميں ايک نئے  ذيلي شعبے  کو متعارف کرا يا گيا، جس کا مقصد انسان کے  ظاہري حسن و جمال ميں  اضافہ تھا، اس وقت سے  يہ شعبہ کافي مقبول ہو گيا- ہر شخص کي خواہش ہوتي ہے  کہ وہ ديکھنے  ميں  اچھا لگے ، اس کا چہرہ خوب صورت معلوم ہو، اس کے  اعضاء چست دکھائي ديں اور ان پر درازيِ عمر کے  اثرات عياں  نہ ہوں- اس نئے  شعبے  سے  ان کي يہ خواہشات پوري ہوتي نظر آئيں- مختلف ممالک ميں  مختلف سطحوں  پر منعقد ہونے  والے  حسن کے  مقابلوں، فلمي دنيا کي چمک دمک، نوجوان لڑکوں اور لڑکيوں  کي دل فريب (Glamorous) زندگي اور ديگر عوامل و محرکات نے  پلا سٹک سرجري سے  فائدہ اٹھانے  والوں  کي تعداد ميں  سيکڑوں  گنا اضافہ کر ديا اور اس فن نے  بہت زيادہ منافع بخش کاروبار کي شکل اختيار کر لي- اس کي مقبوليت کا اندازہ اس رپورٹ سے  لگايا جاسکتا ہے  جس کے  مطابق 2006ء ميں  صرف امريکہ ميں  پلاسٹک سرجري کے  تقريباً گيارہ ملين آپريشن کيے  گئے- پھر جب پلاسٹک سرجري کاروبار بن گئي تو اس کي خواہش رکھنے  والے  يہ تلاش کرنے  لگے  کہ کہاں  کم سے  کم خرچ پر يہ آپريشن کرائے  جاسکتے  ہيں- اس کے  ليے  کيوبا، تھائي لينڈ، ارجنٹائنا، ہندوستان اور مشرقي يورپ کے  بعض ممالک کي نشان دہي کي گئي- آپريشن، آپريشن ہے- اس ميں  بہت سے  خطرات پائے  جاتے  ہيں اور بہت سي پيچيدگيوں  کا انديشہ رہتا ہے- ليکن ان سے  بے  پروا ہو کر ايک دوڑ لگي ہوئي ہے اور اس فن سے  فائدہ اٹھانے  والوں  کي تعداد ميں  روز افزوں  اضافہ ہو رہا ہے-

تحرير: ڈاکٹر محمد رضي الاسلام ندوي

پيشکش: شعبہ تحرير و پيشکش تبيان


متعلقہ تحريريں:

نظام اعصاب پر روزہ کے مفيد اثرات