• صارفین کی تعداد :
  • 1904
  • 3/23/2012
  • تاريخ :

معراج النبي (ص) اور ولايت علي (ع) 1

معراج النبي (ص)

قال رسول الله صلى الله عليه وآله و سلم: "ليلة اسري بي إلى السماء كلمني ربي جل جلاله، فقال: يا محمد، فقلت: لبيك ربي، فقال: إن عليا حجتي بعدك على خلقي وإمام أهل طاعتي من أطاعه أطاعني، ومن عصاه عصاني، فانصبه علما لامتك يهتدون به بعدك" خداوند متعال نے مجھ سے ارشاد فرمايا: علي آپ کے بعد مخلوقات پر ميري حجت ہيں- اور ميرے طاعت گزار بندوں کے امام ہيں، جس نے ان کي اطاعت کي اس نے ميري اطاعت کي اور جو بھي ان کي نافرماني کرے اس نے ميري نافرماني کي ہے-

روز غدير دو آيتيں نازل ہوئيں:

ايک تبليغ کي آيت تھي؛ ارشاد ہوا: "يا أَيهَا الرَّسُولُ بَلِّغْ ما أُنْزِلَ إِلَيكَ مِنْ رَبِّكَ وَ إِنْ لَمْ تَفْعَلْ فَما بَلَّغْتَ رِسالَتَهُ"(1) اور ايک اکمال دين کي آيت تھي؛ ارشاد ہوا: "الْيوْمَ أَكْمَلْتُ لَكُمْ دينَكُمْ وَ أَتْمَمْتُ عَلَيكُمْ نِعْمَتي‌ وَ رَضيتُ لَكُمُ الْإِسْلامَ ديناً"- (2)  

يہاں دو مسئلے پائے جاتے ہيں ايک يہ کہ کيا رسول اللہ صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم کو "يا أَيهَا الرَّسُولُ بَلِّغْ ما أُنْزِلَ إِلَيكَ ---"، کا خطاب غدير کے دن ہي آيا يا اس سے پہلے بھي ہوا تھا؟ يعني يہ کہ کيا رسول اللہ صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم کو آخري حج کے دوران مکہ معظمہ سے لوٹتے ہوئے (غدير پہنچنے سے قبل) علي عليہ السلام کي ولايت کا اعلان کرنے کا حکم ہوا تھا يا يہ کہ يہ حکم آپ صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم کو اس سے پہلے بھي ہوا تھا- رسول اللہ صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم کي حيات طيبہ کا مطالعہ کرتے ہوئے معلوم ہوتا ہے کہ آپ صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم نے دعوت ذوالعشيرہ سے لے کے غدير تک بارہا علي عليہ السلام کي ولايت کا اعلان فرمايا تھا-

-----------

مآخذ

1- سوره مبارکه مائده، آيه67

2- سوره مبارکه مائده، آيه3


متعلقہ تحريريں:

عوالم کے درجاتِ رشد ولايت اميرالمۆمنين کے تابع 7