• صارفین کی تعداد :
  • 4902
  • 5/22/2012
  • تاريخ :

پھولوں کے گيت

پھولوں کے گيت

حسين چيزوں کو ديکھنے اور ان سے لطف اندوز ہونے کي صلاحيّت بچّے کي فطرت ميں مضمر ہے- وہ سربفلک پہاڑوں -چاند ستاروں -خوش نما رنگين پھولوں- تصويروں اور حسين جانداروں کو ديکھ کر ويسا ہي خوش ہو تا ہے- جيسے بڑي عمر کا آدمي- ليکن درس و تدريس کے مروّجہ روکھے پھيکے طريق کے باعث اور غير شاعرانہ مضامين کو رٹ رٹ کر اس کي شا عري اور خوش مذاقي کي يہ حس فناہو جاتي ہے- اور بڑے ہو کر اس ميں اور ايک لوہے کے بنے ہوئے آدمي ميں کچھ فرق نہيں رہتا - 

چناچہ اس امر کي سخت ضرورت ہے- کہ بچوں کا يہ فطري شاعرانہ ذوق بجائے کم ہونے کے ان کي عمر کے ساتھ ساتھ ترقي کرتا رہے کيونکہ يہ قدرت کا خاص عطيہ ہے اور اس کے ہوتے ہوئے انسان کچھ نہ رکھنے پر بھي غني ہو تا ہے- اور اس کے بغير سب کچھ رکھنے پر بھي گدائے بے مايہ -يہي وہ جوہرہے جو دل کو گدازکرتا اور اس ميں پاکيزگي - شرافت-سچائي-بلند نظري-نيک دلي -انسيت اور دردمندي کے اعليٰ وارفع جذبات پيداکرتاہے-

جناب اختر شيراني جماليات کے نہايت بلند پايہ شاعرہيں- کائنات کے خوب وزشت ميںسے صرف حسين چيزوں کو ديکھنااور انہيں سرتاپاشاعرانہ نقطہ نظر سے دنيا کے سامنے پيش کرنا ان کي شاعري کي سب سے بڑي خصوصيت ہے- اور ميں يہ ديکھ کرحيران ہوں- کہ ان کي شاعري کا يہ وصف بچوں کي نطموں کے اس مختصرمجموعے ميں بدرجہ کمال موجود ہے- وہي مناظر قدرت کي تصويريں-اور وہي اختر کي سحرطرازي- وہي لطيف تا ثرات و حسّيات- اور وہي اختر کي جذبات نگاري ونکتہ سنجي- وہي حيرت انگيز قدرت بيان -اچھوتي تشبيہيں اور استعارے -موزوں و دل نشين الفاظ- فرق صرف اس قدر ہے کہ ان نظموں کي زبان مقابلتاً بہت آسان - جذبات زيادہ لطيف اور خيالات زيادہ سريع الفہم ہں-علاوہ ازيں اُن کي دنيا بچوں کي پياري دنيا ہے اِن نظموں ميں بچوں کے جذبات کي ترجماني ايسي خوش اسلوبي سے کي گئي ہے کہ معلوم ہوتا ہے- جيسے کسي کم عمر بچے ميں کسي لطيفہ غيبي سے شعر کہنے کي قدرت پيداہوگئي ہو- اور پھر وہ کم سن شاعر اختر شيراني ہو-

مجھے يقين ہے- کہ بچوں کو اوائل عمر ہي سے قدرت کي حسين چيزوں کا شيدابنانے‘ان ميں خوش مذاقي پيدا کر نے اور ان کے فطري شاعر انہ ذوق کي تربيت ميں يہ کتاب ممدہو گي-

غلام عباس

 

خدا کي تعريف

 زمين پہ پھول آسماں پہ تارے

 ہماري زبان

 ہمارا وطن

 رات

 تاروں بھري رات

 بي مينڈکي

 نيا سال

 پپيہے کا گيت

 ہمارا مدرسہ

 چاندني رات

 کاغذ کي ناو

 اس سے کہ دوں گا

 دريا کنارے چاندني

 گھڑي

 چرواہا

 شملہ

 راوي

 يہ دنيا کتني پياري ہے

 شملہ کي ريل گاڑي

 جگنو

 او صبح کے ستارے

 ارادے

 چڑيوں کي شکايت

 شرير لڑکا

 برسات

 لکھنئوء

 بادل کا گيت

 چندر اور بندر

 قانون کي عزت

 ہوائي جہاز

 کشمير

 برسات کي رات

 ملک سے غداري

 کہاني کا سماں

 يہ ساري خدائي ہمارے لئے ہے

 روضہ تاج محل

 بنارس

 سورج کي کرنوں کا گيت

 ہماري بندريا

 نيا سال آيا

 تتلي

 شب برات

 شالامار

 دودھ پہلے سے زيادہ ہو گيا