• صارفین کی تعداد :
  • 5436
  • 5/22/2012
  • تاريخ :

شب برات

flower

پھر ايک سال ميں جا کر  شب برات  آئي

شرير لڑکے  مچاتے ہيں  شور  گليوں  ميں

نکل کے گھر سے پٹاخے چلا رہا  ہے  کوئي

کسي نے ديکھي نہ ہو آگ کي چھڑي کي بہار

کسي کے ہات ميں جلتي ہوئي چھچھوندر ہے

گلي گلي ميں جو گھر گھر انار  چھٹتے  ہيں

خوشي کے مارے کہيں گيت گا رہا ہے کوئي

کسي غريب کو پيسے نہيں   ملے گھر   سے

نہ   چيختا  ہے  نہ  چلاتا  ہے  نہ    بکتا   ہے

گھروں ميں عورتيں حلواپکار ہي ہيں کہيں

ثواب بھيجيں گي مُردوں کي پاک  جانوں  کو

فرشتے آئے ہيں  سب  کا  حساب  لکھنے  کو

ہمارے  رزق کي  بھي   آج  ہي  خبر  ليں  گے

فضول  آگ  کا  يہ  کھيل اچھي  بات  نہيں

مزے مزے کي نئي پياري  پياري رات  آئي

ہر ايک محو ہے شعلوں کي رنگ رليوں ميں

جلا کے ہات ميں مہتاب  لا رہا  ہے  کوئي

تو آ کے ديکھ لے وہ آج پھلجھڑي کي بہار

کسي کے ہاتھ ميں اک روشني کا چکر  ہے

يہ شعلے ناچتے ہيں يا ستارے لٹتے  ہيں

پٹاخے لينے کو تيزي  سے جا  رہا  ہے  کوئي

جبھي تو خون کے آنسو ہيں بے طرح برسے

کھڑا ہوا بڑي حسرت سے سب کو تکتا ہے

کھلارہي ہيں کہيں اور کھارہي ہيں کہيں

عدم کے ملک ميں برسوں کے ميہمانوں کو

ہر اک کي عمر کي پچھلي  کتاب  لکھنے کو

جو اگلے سال ملے گا  وہ  درج  کر ليں  گے

شب برا ت ہے يہ ايسي ويسي رات نہيں

شاعر کا نام : اختر شيراني

پيشکش: شعبہ تحرير و پبشکش تبيان


متعلقہ تحريريں:

سورج کي کرنوں کا گيت  (ايک انگريزي نظم کا لفظي ترجمہ)