• صارفین کی تعداد :
  • 4431
  • 5/21/2012
  • تاريخ :

کہاني کا سماں

کہاني کا سماں

مري   پياري   انّا   مري    انّا    جاني!

 کہ جس ميں  پرستان  کا  سا   سماں   ہو

ستارے  برستے  ہوں  جس  کي  فضا  ميں

جہاں شہدو شربت کي نہريں رواں ہوں

اور ان ميں کو ئي گيت گاتي ہو ں پرياں 

پہاڑ  اس  ميں  جتنے  ہو ں  سارے  طلائي

اندھيرا  نہ  ہو  نام   کو  بھي   جہاں   ميں

محل ہو ہر اک  سنگ مرمر  کا  جس  ميں

نہ   بوڑھا  ہو  کوئي‘   نہ  کوئي  جواں  ہو

مرے  پر  ہوں  اڑاتا  پھروں  ميں  ہوا ميں

غرض   ميري    انّا   مري   انّا    جاني!

 سنا  دے  مجھے  کوئي  ايسي  کہاني!

زميں پھول   کي  چاند  کا  آسماں  ہو

ہو خوشبوکا طوفان جس کي ہوا ميں

جہا ں ہيرے ياقوت کي کشتياں ہوں

شعاعوں کے بربط   بجاتي ہوں  پرياں

اور  ان  کے سہانے   نظارے    طلائي

ہو اک چاند روشن ہر اک شمع داں ميں

ہر اک طاق ہو لعل و گوہر کا جس ميں 

فقط ميں  ہو ں اور  ميري  انّا  وہاں  ہو

حکومت ہو ميري وہاں کي فضا ميں

سنا  دے  مجھے  کو ئي  ايسي  کہاني!

شاعر کا نام : اختر شيراني

پيشکش: شعبہ تحرير و پبشکش تبيان


متعلقہ تحريريں:

قانون کي عزت