• صارفین کی تعداد :
  • 3402
  • 1/5/2012
  • تاريخ :

شملے کي ريل گاڑي

شملے کی ریل گاڑی

سولن کي چوٹيوں سے

جھنڈي ہلا رہي ہے                

غصے ميں بے تحاشا

سيٹي بجا رہي ہے

ديکھو! وہ آ رہي ہے

شملے کي ريل گاڑي

دو انجنوں کے منہ سے

شعلے نکل رہے ہيں

دو ناگ مل کے گويا

دوزخ اگل رہے ہيں

آنکھيں دکھا رہي ہے

شملے کي ريل گاڑي

سنسان گھاٹيوں پر

اونچي پہاڑيوں ميں               

 پتھريلي چوٹيوں پر

ٹيلوں ميں جھاڑيوں ميں

لہراتي آ رہي ہے

شملے کي ريل گاڑي

لوہے کي ايک ناگن

بل کھا رہي ہو جيسے

اور اونچي چوٹيوں پر

لہرا رہي ہو جيسے

اس طرح آ رہي ہے

شملے کي ريل گاڑي

بن باسيوں کو کيا کيا

دل شاد کر رہي ہے                

سنسان جنگلوں کو

آباد کر رہي ہے

بستي بسا رہي ہے

شملے کي ريل گاڑي

نکلي سرنگ سے يوں

جوں بل سے ناگ نکلے

 چمکي سرے پہ جيسے

بھٹي سے آگ نکلے

کيا گل کھلا رہي ہے

شملے کي ريل گاڑي

شاعر کا نام : اختر شيراني

پيشکش: شعبہ تحرير و پبشکش تبيان


متعلقہ تحريريں:

چرواہا