• صارفین کی تعداد :
  • 3073
  • 1/5/2012
  • تاريخ :

راوي

راوی

بر سات ہے لہراتي ہوئي آتي ہے راوي               

ناگن کے سے بل کھاتي ہوئي آتي ہے راوي

ہر چيز کو ٹھکراتي ہوئي آتي ہے راوي

ٹيلوں کا صفايا کيا منہ خاک کا دھويا

 سبزے کو ڈبويا- کہيں کھيتوں کو بھگويا

ہر زرّہ کو نہلاتي ہوئي آتي ہے راوي

پتھر کي چٹانوں سے سنو آتي ہے آواز!

 اور دور تلک جھوم کے لہراتي ہے آواز!

يا گيت کو ئي گا تي ہوئي آتي ہے راوي

ڈوبي ہوئي، پاني ميں کناروں کي زميں ہے

 جنگل ہو کہ سبزہ ہو نشاں اس کا نہيں ہے

ہر چيز پہ يوں چھا تي ہوئي آتي ہے راوي

اس سال تو راوي ميں ہے طوفان بلا کا

جو موج ہے دريا کي ہے سامان بلا کا

کس زور سے جھلاتي ہوئي آتي ہے راوي

دريا ميں کو ئي ناۆ دکھائي نہيں ديتي

ملاحوں کي آواز سنائي نہيں ديتي

ہاں غصے ميں چلاتي ہوئي آتي ہے راوي!

شاعر کا نام : اختر شيراني

پيشکش: شعبہ تحرير و پبشکش تبيان


متعلقہ تحريريں:

نيا سال