• صارفین کی تعداد :
  • 2915
  • 1/5/2012
  • تاريخ :

دريا کنارے چاندني

دریا کنارے چاندنی

کيا چھا رہي ہے چاندني

دريا کي اِک اِک لہر کو

اِٹھلا رہي ہے چاندني

نہلا رہي ہے چاندني

لہرا رہي ہے چاندني!

دريا کنارے ديکھنا

تاروں کو دامن ميں لئے

پاني ميں تارے ديکھنا

کيا کيا نظارے ديکھنا

دکھلا رہي ہے چاندني!

ٹھنڈي ہوا خاموش ہے

خاموش ہے سارا جہاں

 اجلي فضا خاموش ہے

ہر اک صدا خاموش ہے

اور چھا رہي ہے چاندني!

ديکھو سمے وہ دور کے

دريا کي نيلي سطح پر

خيمے کھڑے ہيں نور کے

کچھ پھول سے بلور کے

برسا رہي ہے چاندني!

اے لو وہ بدلي آ گئي

باہر نکلنے کے لئے

اور چاندني پر چھا گئي

پھر آئي پھر کترا گئي

گھبرا رہي ہے چاندني!

لو رات کے منظر چلے

بيٹھے ہوئے ياں کيا کريں

تارے بھي گھل گھل کر چلے

اختر ہم اپنے گھر چلے

اب جا رہي ہے چاندني!

شاعر کا نام : اختر شيراني

پيشکش: شعبہ تحرير و پبشکش تبيان


متعلقہ تحريريں:

اور آ گئيں بي مينڈکي