• صارفین کی تعداد :
  • 800
  • 8/13/2013
  • تاريخ :

بحرين ميں انساني حقوق کي خلاف ورزي

بحرین میں انسانی حقوق کی خلاف ورزی

بحرين ميں انساني حقوق مرکز نے انساني حقوق کي کارکن مريم خواجہ کي وطن واپسي پر پابندي کو عالمي قوانين کے منافي قرارديا ہے-

لولو چينل کے مطابق بحرين انساني حقوق مرکز نے کہا ہے کہ مريم خواجہ کو وطن واپس آنے کي اجازت نہ دينا آئين ، عالمي قوانين اور سياسي اور شہري حقوق کے خلاف ہے- بحرين کے انساني حقوق مرکز نے اسي کے ساتھ ساتھ آل خليفہ کے ہاتھوں سياسي اور انساني حقوق کے کارکنوں نيو انقلابي عوام پر تشدد آميز اقدامات کي بابت بھي تشويش کا اظہار کيا-

واضح رہے کہ برطانوي حکام نے جو آل خليفہ کے جرائم ميں برابر کے شريک ہيں مريم خواجہ کو  بحرين کا سفر کرنے سے روک ديا ہے- ادھر بحرين کے ايک رہنما قسيم عمران نے پريس ٹي وي سے گفتگو ميں کہا ہے کہ مغربي ملکوں کو آل خليفہ کي حمايت ختم کرکے ملت بحرين کے حقوق کا احترام کرنا چاہيئے-

انہوں نے کہا کہ آل خليفہ کے ہاتھوں وسيع پيمانے پر انساني حقوق کي خلاف ورزي کے باوجود مغربي ممالک بالخصوص امريکہ اور برطانيہ آل خليفہ کي مسلسل حمايت کر رہے ہيں-

 

متعلقہ تحریریں:

جاپان پر امريکا کي ايٹمي بمباري کي برسي

ايٹمي مذاکرات، روس کي حمايت