• صارفین کی تعداد :
  • 4135
  • 7/11/2011
  • تاريخ :

جنگل کا بادشاہ

جنگل کا بادشاہ

مجھ سے ملیے جہاں پناہ ہوں میں

سارے جنگل کا بادشاہ ہوں میں

لوگ سب مجھ کو شیر کہتے ہیں

جانور بھی دلیر کہتے ہیں

میری ہیبت سبھی پہ طاری ہے

میرا جنگل پہ حکم جاری ہے

میں دَھاڑوں تو جانور سارے

چُھپتے پھرتے ہیں خوف کے مارے

لوگ کہتے ہیں میں درندہ ہوں

زورِ بازو پہ اپنے زندہ ہوں

 

عمیر فرید


متعلقہ تحریریں:

دونوں شیر

گنتی

کاش میں ہوتا تھانیدار

شمیم کی بلّی

بندر اور بندریا