• صارفین کی تعداد :
  • 2291
  • 10/15/2011
  • تاريخ :

اے عشق ہميں برباد نہ کر!

عشق

اے عشق نہ  چھيڑ آ آ کے ہميں، ہم   بھولے ہوğ  کو ياد نہ کر!

پہلے  ہي  بہت  ناشاد  ہيں  ہم ، تو   اور  ہميں ناشاد  نہ  کر!

قسمت کا ستم ہي کم نہيں کچھ ، يہ تازہ ستم  ايجاد  نہ  کر!  

                يوں ظلم نہ کر، بيداد  نہ کر!

اے عشق ہميں برباد  نہ  کر!

جس  دن  سے  ملے  ہيں  دونوں  کا، سب  چين  گيا، آرام  گيا

چہروں  سے  بہار   صبح  گئي، آنکھوں   سے  فروغ   شام   گيا

ہاتھوں سے خوشي  کا جام چھٹا، ہونٹوں سے ہنسي  کا نام  گيا            

                غمگيں نہ بنا،  ناشاد  نہ  کر!

اے عشق ہميں  برباد نہ کر!

راتوں کو اٹھ اٹھ  کر  روتے  ہيں، رو  رو  کے دعائيں کر تے ہيں

آنکھوں ميں تصور،دل ميں خلش،سر دھنتے ہيں آہيں بھرتےہيں

اے عشق! يہ کيسا روگ  لگا، جيتے   ہيں  نہ  ظالم مرتے ہيں؟          

                يہ ظلم تو اے  جلاد  نہ  کر!

اے عشق  ہميں برباد نہ کر!

يہ روگ لگا  ہے جب  سے  ہميں، رنجيدہ ہوں ميں بيمار ہے وہ

ہر وقت  تپش، ہر  وقت  خلش بے خواب ہوں ميں،بيدار ہے وہ

جينے  سے  ادھر   بيزار   ہوں ميں،  مرنے  پہ ادھر تيار  ہے  وہ    

                اور  ضبط  کہے  فرياد نہ کر!

اے عشق  ہميں برباد نہ کر!

جس دن سے  بندھا  ہے دھيان  ترا، گھبرائےہوئے سے رہتے ہيں

ہر  وقت  تصور   کر  کر   کے  شرمائے   ہوئے  سے   رہتے  ہيں

کملائے  ہوئے   پھولوں  کي  طرح  کملائے ہوئے سے رہتے ہيں     

                پامال  نہ   کر، برباد   نہ   کر!

اے عشق  ہميں  برباد نہ کر!

بيددر!  ذرا  انصاف  تو  کر!  اس   عمر ميں اور مغموم  ہے  وہ!

پھولوں کي طرح نازک ہے ابھي ، تاروں  کي  طرح معصوم ہے وہ!

يہ حسن ، ستم! يہ رنج،غضب! مجبور ہوں  ميں! مظلوم ہے وہ!         

                مظلوم  پہ  يوں  بيداد  نہ  کر

اے عشق ہميں  برباد  نہ  کر!

اے   عشق خدارا  ديکھ کہيں ، وہ  شوخ  حزيں  بدنام نہ ہو!

وہ    ماہ لقا   بدنام   نہ   ہو،  وہ   زہرہ   جبيں   بدنام نہ    ہو!

ناموس   کا   اس   کے  پاس  رہے،  وہ  پردہ نشيں  بدنام نہ  ہو!        

                اس پردہ نشيں کو ياد  نہ  کر!

اے عشق ہميں  برباد  نہ  کر!

اميد کي جھوٹي جنت کے، رہ  رہ  کے  نہ  دکھلا  خواب  ہميں!

آئندہ کي فرضي عشرت  کے، وعدوں  سے  نہ  کر  بيتاب  ہميں!

کہتا   ہے  زمانہ  جس کو خوشي ، آتي  ہے  نظر   کمياب ہميں!        

                چھوڑ ايسي خوشي کويادنہ کر!

اے  عشق   ہميں  برباد  نہ کر!

کيا سمجھےتھےاور تو کيا نکلا،يہ سوچ کےہي  حيران ہيں ہم!

ہے  پہلے  پہل  کا  تجربہ  اور کم عمر ہيں ہم،  انجان ہيں ہم!

اے عشق ! خدارا رحم و کرم! معصوم ہيں ہم  ،نادان ہيں ہم!                

                نادان  ہيں  ہم،  ناشاد نہ  کر!

اے عشق ہميں  برباد  نہ کر!

وہ  راز  ہے يہ غم  آہ جسے، پا  جائے  کوئي   تو   خير   نہيں!

آنکھوں  سےجب آنسو بہتےہيں، آجائے کوئي  تو  خير نہيں!

ظالم ہے يہ  دنيا، دل   کو يہاں، بھا جائے  کوئي  تو  خير نہيں!         

                ہے ظلم   مگر  فرياد  نہ  کر!

اے عشق ہميں بر باد نہ کر!

دو  دن  ہي   ميں   عہد  طفلي  کے، معصوم   زمانے  بھول گئے!

آنکھوں سےوہ خوشياں مٹ سي گئيں،لب کووہ ترانےبھول گئے!

ان  پاک   بہشتي  خوابوں  کے،  دلچسپ  فسانے   بھول  گئے!

                ان خوابوں سے يوں آزادنہ کر!

اے عشق ہميں  برباد  نہ  کر!

اس  جان  حيا  کا بس نہيں کچھ، بے بس ہے پرائے بس ميں ہے

بے  درد  دلوں  کو  کيا  ہے خبر، جو  پيار  يہاں  آپس  ميں  ہے

ہے  بے بسي  زہر  اور  پيار ہے  رس، يہ زہر چھپا اس رس ميں ہے                

                کہتي  ہے  حيا  فرياد  نہ  کر!

اے عشق ہميں  برباد  نہ کر!

آنکھوں  کو  يہ  کيا آزار ہوا ، ہر   جذب   نہاں   پر  رو   دينا!

آہنگ   طرب   پر   جھک   جانا ، آواز   فغاں   پر    رو   دينا!

بربط  کي صدا  پر  رو  دينا ، مطرب  کے  بياں   پر   رو   دينا!       

                احساس کو غم  بنياد  نہ  کر!

اے عشق ہميں  برباد  نہ کر!

ہر  دم  ابدي  راحت  کا  سماں  دکھلا کے ہميں دلگير نہ کر!

للہ    حباب    آب    رواں    پر    نقش    بقا    تحرير   نہ  کر!

مايوسي  کے  رمتے  بادل  پر  اميد  کے  گھر  تعمير  نہ   کر!          

                تعمير   نہ   کر، آباد  نہ  کر !

اے عشق ہميں بر باد نہ کر!

جي چاہتا  ہے  اک دوسرے کو  يوں  آٹھ  پہر   ہم  ياد  کريں!

آنکھوں  ميں  بسائيں خوابوں کو،اور دل ميں خيال آباد کريں!

خلوت ميں بھي ہوجلوت کاسماں،وحدت کودوئي سےشادکريں!            

                يہ   آرزوئيں   ايجاد  نہ   کر!

اے عشق  ہميں برباد  نہ کر!

دنيا  کا  تماشا  ديکھ  ليا، غمگين  سي  ہے ، بے  تاب  سي ہے!

اميد يہا ں اک وہم سي ہے‘ تسکين يہاں اک خواب  سي ہے!

دنيا ميں خوشي کا نام نہيں‘ دنيا ميں خوشي ناياب  سي  ہے!                

                دنيا ميں خوشي کو ياد نہ کر!

اے عشق ہميں  برباد  نہ کر!

شاعر: اختر شيراني

 متعلقہ تحريريں :

جشن بہار

محاورہ، روزمرہ، ضرب المثل اور تلميح ميں فکري اور معنوي ربط (حصّہ چهارم)

محاورہ، روزمرہ، ضرب المثل اور تلميح ميں فکري اور معنوي ربط (حصّہ سوّم)

محاورہ، روزمرہ، ضرب المثل اور تلميح ميں فکري اور معنوي ربط (حصّہ دوّم)

محاورہ، روزمرہ، ضرب المثل اور تلميح ميں فکري اور معنوي ربط