• صارفین کی تعداد :
  • 845
  • 9/11/2011
  • تاريخ :

جشن بہار

جشن بہار

جب  وادي گل  کے شعرستاں پر خاموشي  چھا جاتي  ہے

جب  ليلي شب کي زلف سيہ، سينے تک  لہرا جاتي   ہے

جب  موج  ہوائے ساحل  کو، نشوں بھري  نيند آجاتي ہے

جب چاندني دشت وگلشن ميں موتي سے  برساجاتي ہے       

 جب زمزمہ  زار ہستي اک  ہو  کي بستي  ہو  جاتا ہے!

جب نيند کي گہري مستيوں ميں سارا عالم سو جاتاہے!

تب  وادي کي دکمسن کليوں تک زہرہ کي شعاعيں آتي ہيں

اور   ان  کے رنگ و بو کے رسيلے پردوں ميں بس جاتي ہيں

پھر شبنم بوسے ليتي ہے،  مستي  کي  بہاريں  چھاتي  ہيں

اور    ماہوشان   کاہکشاں ،  گلہائے    طلا   برساتي   ہيں   

جس وقت يہ سب رنگينياں اس وادي ميں يکجاہوتي ہيں!

تب  کليوں  کے  رنگيں پہلوسے کچھ حوريں پيداہوتي ہيں!

پھر حوريں يہ ساري، مل جل کر اک نغمہ رنگيں گاتي  ہيں

اور دائرے کي  سي صورت ميں سب رقص اپنا دکھلاتي ہيں

ايک  ايک  حريري جنبش سے‘ جنت کے سمے برساتي ہيں

اور   وادي   مہ  و   انجم   کے   نظاروں   کو   شرماتي   ہيں           

 سنسان  فضا  ميں  نغموں  کا  اک  طوفان  بپا ہو جاتا ہے!

ويران  ہوا  ميں  رقص  کا  اک  ہيجان  بپا  ہو  جاتا  ہے!

يوں  رات  بھر ان  کے  مست ترانے جھومتے ہيں گلزاروں پر

اور  رات  بھر  ان  کا  رقص  بہاريں  تيرتا  ہے   کہساروں  پر

شاداب و  حسيں  رعنائياں  سي، چھائي  رہتي  ہيں تاروں  پر

اک   حشر  سا  نور  و  نکہت  کا   رہتا  ہے  بپا  نظاروں   پر           

 جب صبح کو سورج کي کرنيں مشرق سےابھر کي آتي ہيں!

تب شرم کي ماري يہ کليوں کے پردوں ميں چھپ جاتي ہيں!

شاعر: اختر شیرانی


 متعلقہ تحريريں :

محاورہ، روزمرہ، ضرب المثل اور تلميح ميں فکري اور معنوي ربط

اقبال کي اُردو غزلوں ميں رديف کا استعمال کي اہميت (حصّہ پنجم)

اقبال کي اُردو غزلوں ميں رديف کا استعمال کي اہميت (حصّہ چهارم)

اقبال کي اُردو غزلوں ميں رديف کا استعمال کي اہميت (حصّہ سوّم)

اقبال کي اُردو غزلوں ميں رديف کا استعمال کي اہميت (حصّہ دوّم)