• صارفین کی تعداد :
  • 895
  • 10/10/2011
  • تاريخ :

خوش آمديد

خوش آمدید

شملے   وہ   ماہِ   رواں    آنے    کو    ہے

اس   زميں   پر   آسماں   آنے   کو    ہے             

بہر    پابوسي    بڑھا   ابر    بہار

وہ   بہار  گل  فشاں  آنے  کو   ہے

جس سےتھي مہکي ہوئي واديء   سندھ

آج     وہ     بوئے    رواں   آنے   کو   ہے          

دامنِ  بحر  عرب کي  کر  کے  سير

ميري   سلمائے  جواں  آنے  کو ہے

واديء   شملہ    نہ    ہو   مغرور    کيوں

اک   ستارہ    ميہماں    آنے    کو     ہے              

وہ    ہے     زہرہ   اور  شملہ  آسماں

زہرہ    سوئے    آسماں  آنے  کو  ہے

وہ  ہے   اک   چاند  اور  شملہ  کہکشاں

چاند    سوئے    کہکشاں   آنے  کو   ہے              

وہ  ہے اک  حور اور شملہ اک جناں

حور   پھر  سوئے  جناں  آنے کو ہے

وہ  ہے  اک   سرو   اور    شملہ  گلستاں

سرو   سوئے   گلستاں     آنے   کو    ہے             

وہ ہے اک پھول  اور  شملہ  باغباں

پھول  سوئے   باغباں  آنے  کو  ہے

جس  کے   قدموں   پر  فدا  جان  جہاں

آج   وہ    جان     جہاں    آنے   کو   ہے              

زندگاني سے کہو، فاني ہے  کيوں؟

نورِ  حسن   جادواں   آنے   کو  ہے

ماہِ   انجم   سے  کہو،  سجدے   کريں!

وہ   ملائک   آستاں    آنے    کو     ہے                

طوطيان   شملہ   ہوں  شکر   شکن

بلبل   شيريں   زباں   آنے   کو   ہے

شاعرانِ   شہر    سے    جا    کر   کہو

ميرا   الہام    جواں    آنے     کو    ہے                 

چشم انجم نے ديکھا  تھا جو حسن

آج  وہ  حسنِ   رواں   آنے   کو   ہے

اس   کا     استقبال   کرنے     کے   ليے

دولتِ    ہر   دوجہاں    آنے   کو     ہے               

اس  کا  فرش  راہ   بننے    کے    ليے

خاک پر  پھر  کہکشاں  آنے  کو ہے

گردِ   رہ  سے   پاک   کرنے    کے   ليے

گيسوئے   حور    جناں   آنے   کو   ہے               

پائے  زرّيں  اس  کے  دھونے  کے ليے

سلسبيلِ    زرفشاں   آنے    کو    ہے

کيوں نہ شمشاد و صنوبر سر جھکائيں

آج    وہ    سرو   رواں   آنے   کو    ہے              

جا کے  وادي  ميں بچھادوں فرش گل

وہ   سراپا  پرنياں     آنے    کو    ہے

جو   لٹاتا   ہے     بہارِ    رنگ   و   بو

پھر   وہي   آب   رواں   آنے   کو    ہے              

مستياں   سي   ہيں  فضا  ميں منتظر

اس   کي   بوئے  دلستاں  آنے  کو  ہے

سندھ   کے    ساحل    پہ   لہراتا   ہؤا

رنگ   و  بو  کا   کارواں   آنے  کو  ہے              

دامن   راوي    کو    مہکاتي   ہوئي

اک  نسيم  گل   فشاں  آنے  کو   ہے

شاخ گل جھک کرنہ کيوں سجدےکرے

وہ   بت   نازک    مياں   آنے   کو   ہے               

رنگ  و  بو  کي  داستا ں کہئے جسے

وہ   مجسم   داستاں    آنے    کو   ہے

لعل  لب،  ديں    نذر ،  گلہائے   چمن

وہ  گل  شيريں   دہاں    آنے    کو   ہے              

بے خودي ميں کيوں نہ اختر جان دے

آج   وہ  جانِ  جہاں   آنے   کو   ہے!!

شاعر: اختر شيراني


 متعلقہ تحريريں :

محاورہ، روزمرہ، ضرب المثل اور تلميح ميں فکري اور معنوي ربط (حصّہ چهارم)

محاورہ، روزمرہ، ضرب المثل اور تلميح ميں فکري اور معنوي ربط (حصّہ سوّم)

محاورہ، روزمرہ، ضرب المثل اور تلميح ميں فکري اور معنوي ربط (حصّہ دوّم)

محاورہ، روزمرہ، ضرب المثل اور تلميح ميں فکري اور معنوي ربط

اقبال کي اُردو غزلوں ميں رديف کا استعمال کي اہميت (حصّہ پنجم)