• صارفین کی تعداد :
  • 2370
  • 11/11/2009
  • تاريخ :

مجيد امجد سے باتيں (حصّہ ششم)

مجيد امجد

مجيد امجد سے باتيں (حصّہ اوّل)

مجيد امجد سے باتيں (حصّہ دوّم)

مجيد امجد سے باتيں (حصّہ سوّم)

مجيد امجد سے باتيں (حصّہ چهارم)

مجيد امجد سے باتيں (حصّہ پنجم)

س: روماني نظميں جن كے آپ نے حوالے ديئے، اس زمانے كے بيشتر شعرا كا آغاز انہيں نظموں سے ہوا- آپ كي ابتدائي نظميں بهي روماني نظموں اور ان شعراء كے ہاں كچه فرق محسوس كيا ہے؟

ج: اس زمانے ميں رومان سے مراد اختر شيراني تها اور قطعات اور (Sonnets) و غيره بهي لكهے جا رہے تهے اس زمانے ميں اس رنگ كا غلبہ تها- ليكن آپ ميري ابتدائي نظموں ميں اس رنگ سے تفاوت ديكهيں گے- ميري نظموں ميں Pattern مختلف ہے ميري اس زمانے كي نظم" ساتهي" ہے- جو مضمون كے لحاظ سے بالكل مختلف ہے- ان كو روماني نظميں اس ليے كہہ ديں كہ جواني كے زمانے كي نظميں ہيں جن ميں انسان اثر قبول كرتا ہے-

س: آپ كو كون كون سے كلاسيكل شعراء پسند ہيں؟

ج: ميں نے مولانا ظفر علي خان كا كلام بہت پڑها ہے- ميں ان كے كلام كا قائل ہوں- مجهے اس وقت بهي ان كا بہت سا كلام ياد ہے- ميں ان كے اسلوب بيان اور انداز كا بڑا معتقد ہوں- بعض كتابيں جو اسي زمانے ميں طبع ہوئي تهيں جن ميں قديم اردو نظميں جمع كي گئي تهيں، ان سے مسحور ہوا- مثلا مناظر فطرت و غيره كے عنوان سے گلاب چند عطر كپور و غيره نے جو مجموعے چهپانے انہوں نے ميري رہنمائي كي- ميرے ليے يہ نئي باتيں تهيں كہ جب دلي اور لكهنؤ ميں امير مينائي، داغ و غيره كے شاگرد غزل كہہ رہے تهے تو انہيں كے ہم عصروں ميں بعض لوگوں نے نظميں بهي كہيں-

 

                                                                                                                                                     جاری ہے

کتاب کا نام چند اہم جديد شاعر
مولف  ڈاكٹر خواجه محمد زكريا
پیشکش شعبۂ تحریر و پیشکش تبیان