• صارفین کی تعداد :
  • 1862
  • 8/12/2009
  • تاريخ :

مجيد امجد سے باتيں (حصّہ دوّم)

مجيد امجد

س: اس زمانے ميں جو بهي كئي شعر كہتا تها، غزل گوئي سے آغاز كرتا تها- ليكن آپ شروع سے نظم گوئي اس طرف مائل رہے- اس كي كوئي خاص وجہ ہے؟

ج:اس وقت كچه معلوم نہيں تها- اس وقت زياده تفريق قائم تهي- مري ابتدا كي جتني چيزيں ہيں نظم ميں ہيں- غزل كے ساته بهي كچه عرصہ ميرا لگاؤ رها ہے- ايك زمانہ تها كہ ہر روز غزل كہتا تها – پهر نظم اور اس كي مختلف اشكال كي طرف ميري توجہ ہوئي تهي- اس ميں جس شخص نے بهي اضافہ كيا ہے- وه اس كي اپني كاوش تهي، اور ذاتي تجسس اس وقت كوئي بني بناوي چيز موجود نہيں تهي-

س: ہيئتوں سے آپ كو اتني دلچسپي كيوں پيدا ہوئي؟

ہيئت سے اس ليے كہ سب سے پہلے تو مروجہ ہيئت تهي- مثلاّ مثنوي، مثنوي كي مروجہ ہيئت ميں شعر كہتے وقت يہ خيال ہوتا تها كہ اس ميں انہي پابنديوں كے ساته كہہ سكون تو ٹهيك ہے – ورنہ اس ميں ايك مصرعے كا دوسرے سے ٹكراؤ ہوجاتا تها اور مثنوي كا ايك ايسا شعر ہے جس ميں پہلا مصرع دوسرے سے ربط ركهتا ہو بہت كم ہوتا ہے چنانچہ ميں نے آگےبڑهنے كي كوشش كي  - اس كوشش كے سلسلے ميں تجسس سے مجهے آگے راستے ملے- مثلاّ جب انگريزي شعراء كے طرز پڑهے جس ميں چار چار لائنوں كا بند ہوتا تها – ميں  نے سوچا كہ اس زمانے ميں كچه نظميں اس قسم كي كہيں اور موضوع كے لحاظ سے مختلف ہيئتوں كے تجربے كيے-

                                                                                                                                                             جاری ہے

کتاب کا نام چند اہم جديد شاعر
مولف ڈاكٹر خواجه محمد زكريا
پیشکش شعبۂ تحریر و پیشکش تبیان

 


متعلقہ تحریریں:

مھناز رؤفی کا انٹرویو

 سيد حسن نصراللہ کا انٹرويو

 ڈاکٹر موسی ابو مرزوق  سے انٹرویو

علامہ سید افتخار حسین نقوی کا  انٹرویو