• صارفین کی تعداد :
  • 1719
  • 8/19/2009
  • تاريخ :

مجيد امجد سے باتيں (حصّہ سوّم)

مجيد امجد

س:ميں چند دن پہلے سوغات كا جديد نمبر پڑه رها تها اس ميں نقاد نے لكها ہے كہ آپ كي شاعري ميں ايك بڑے شہر كا (image) ابهرتا ہے؟ آپ كي كيا رائے ہے؟

ج: گزارش يہ ہے كہ ہر زمانے كے مروجہ سياسي يا فلسفيانہ نظريات سے متاثر ہو كر اپني رائے كا اظہار كرتا ہے – جس زمانے كي يہ اكثر نظميں ہيں- اس وقت ہندوستان اور پاكستان آزاد نہيں ہوئے تهے- غلامي كے دور ميں ناقدوں نے جس نظريئے كو اپنايا وه ترقي پسندانہ نظريہ ميں يہ چيزيں آتي ہيں: شہر كي زندگي، شہر كي مسائل، اس زمانے ميں لكهنے والے مزدور اور اسي طرح كے طبقات كے متعلق كہتے تهے- چنانچہ س دور كے ناقد اسي نظر سے ديكهتے ہيں-

س: ميرا مطلب يہ ہے كہ آپ كي شاعري ميں جو كهيت، پگڈنڈياں، درخت ہيں ان سے مجهے ايسا معلوم ہوتا  ہے كہ ميں چهوںے شہرميں پہنچ گيا ہوں-

ج: ٹهيك ہے آپ كي رائے صحيح ہے- نہ ہي ميري زياده زندگي بڑے شہر ميں گزري ہے- بڑے شہر كے ماحول پر چند نظميں ہيں جيسے بس سٹينڈپر، ورنہ اكثر چهوٹے شہروں كے بارے ميں ہيں-

س: ايك اور نقاد نے اسي شمار ميں لكها ہے كہ آپ كي نظموں ميں over civilization سے بے زاري پائي جاتي ہے كچه نقادوں نے يہ بند كه كر
جسے جزداں بهي اك بار گراے ہے
وه بچہ بهي سوئے مكتب رواں ہے

 

لكها ہے كہ يہ تعميري نقطہ نظر نہيں ... ليكن تو شاعر كا انداز نظر ہے- آپ كي رائے كيا ہے؟

ج: ميں نے يہ نظم اس وقت كہي جب ميں ڈسٹركٹ كونسل ميں كلرك تها- اس ميں معاش كا مسئلہ ہے- جو شہروں اور ديہاتوں ميں بهي ہے- اس نظم ميں تو وہي كچه ہے جو آدمي اپني زندگي بسر كرنے كے ليے كرتا ہے-

                                                                                                                                                            جاری ہے

کتاب کا نام چند اہم جديد شاعر
مولف ڈاكٹر خواجه محمد زكريا
پیشکش شعبۂ تحریر و پیشکش تبیان

 


متعلقہ تحریریں:

مھناز رؤفی کا انٹرویو

سيد حسن نصراللہ کا  انٹرويو

ڈاکٹر موسی ابو مرزوق  سے انٹرویو