• صارفین کی تعداد :
  • 1876
  • 10/19/2009
  • تاريخ :

مجيد امجد سے باتيں (حصّہ پنجم)

مجيد امجد

س: جن لوگوں آپ كے بعد لكهنا شروع كيا.مگر جنهيں نظم نگار كے طور پر كچه نقاد اہميت ديتے ہيں مثلا اخترالايمان ان كے كلام سے آپ كب متعارف ہوئے؟

ج: اخترالايمان كا كلام اس وقت " خيال" بمبئي ميں چهپتا تها جو اخترالايمان اور ميراجي نے نكالا تها- ورنہ مجهے ان كا كلام بہت كم ديكهنے كا اتفاق ہوا بعد ميں ان كي كتابيں پڑهيں ان ك اسلوب بعض نظموں ميں بہت اچها ہے مگر وه ميري طبيعت كے مطابق نہيں ہے سوائے چند نظموں كے مثلا " بچہ " (غالبا مراد ايك لڑكا)

س: اس وقت اردو ميں دو بڑے نظم نگار سمجهے جاتے ہيں ايك فيض ہيں جو craze بن گئے ہيں - دوسرے راشد ہيں- يہ دونوں آپ كے معاصر ہيں- ان سے آپ متاثر ہوئے يا ان كا كلام كس وقت آپ كي نظر سے گزرا؟

ج: فيض صاحب كے كلام اس وقت متعارف ہوا جب ميں اسلاميہ كالج ميں پڑهتا تها – وه گورنمنٹ كالج ميں ايم- اے كر رہے تهے- اسي زمانے ميں راشد بهي فيض صاحب كي نظميں " مجه سے پہلي سي محبت ميري محبوب نہ مانگ" اور" سورہي  ہے گهنے درختوں پر چاندني كي تهكي ہوئي آواز " بڑي مقبول تهيں- اسي طرح راشد صاحب اس زمانے ميں پابند كہتے تهے-

شگفتہ و شادمان رہے گي
ميري محبت جوان رہے گي

 

بعد ميں جب يہ خود ادبي دنيا كے اڈيٹر رہے ان كا كلام ديكها ہے ليكن ميں اس وقت (free verse) كے اسلوب كو پسند نہيں كرتا تها-

                                                                                                                                                           جاری ہے

کتاب کا نام  چند اہم جديد شاعر
مولف  ڈاكٹر خواجه محمد زكريا
پیشکش شعبۂ تحریر و پیشکش تبیان 

 


متعلقہ تحریریں:

مجيد امجد سے باتيں (حصّہ اوّل)

مھناز رؤفی کا انٹرویو