• صارفین کی تعداد :
  • 4217
  • 2/3/2009
  • تاريخ :

ہمارا مدرسہ

مدرسہ

کو ئی دنیامیں  پیارا   مدرسہ ہے!
تو وہ بے شک ہمار ا مدرسہ   ہے
عمارت اس کی کتنی خوش نما  ہے
محل جنّت کا   کہئے تو  بجا  ہے
منڈیروں پر ہیں گملوں کی قطاریں
سمٹ آئی ہیں باغوں کی   بہاریں
جدھر دیکھو شگوفے کھل رہے ہیں
 ہوا سے ننھے پودے ہل  رہے  ہیں
جو کمرہ ہے نفیس اور جاں  فزا  ہے
 جہاں پڑھنے کو خود دل چاہتا  ہے
شریف استاد کیسے مہرباں ہیں
 شفیق ایسے زمانے میں کہاں ہیں
محبت سے پڑھا تے ہیں ہر اک کو
جو کچھ بُھولے بتاتے ہیں ہر اک کو
ہمارا    باغ   اور    میدان   اچھا
ہمارے   کھیل   کا   سامان   اچھا
ہیں لڑکے باہم ا ُلفت کرنے  والے
اور استادوں کی عزّت کرنے   والے
سب استادوں کا کہنا مانتے ہیں
 اور ان  کا  مرتبہ    پہچانتے   ہیں

 

کتاب کا نام  :   پھولوں کے گیت

شاعر کا نام   :     اختر شیرانی

               پیشکش :   شعبۂ تحریر و پیشکش تبیان