• صارفین کی تعداد :
  • 5358
  • 8/25/2008
  • تاريخ :

زميں پہ پھول آسماں پہ تارے

اختر شیرانی

خدا  کی قدرت  کے ہیں  نظارے
زمیں پہ پھو ل آسماں پہ تارے!

 

سمے ہیں یہ کیسے پیارے پیارے

زمیں پہ پھو ل آسماں پہ تارے!

 

وہ  سارے  سنسار  کا خدا  ہے

سب اس کی قدرت ہی سے بنا ہے!

 

اسی کی قدرت نے ہیں نکھارے

زمیں پہ پھو ل آسماں پہ تارے!

 

یہ باغ ایسے  کھلائے کس  نے؟

چراغ ایسے جلائے کس نے؟

 

یہ سب خدا ہی نے ہیں سنوارے

زمیں پہ پھو ل آسماں پہ تارے!

 

ہیں پھول سب حور کی سی صورت

ستارے سب نور کی سی مورت

 

ہیں کیسے جنّت کے سے نظارے

زمیں پہ پھو ل آسماں پہ تارے!

 

خدا  نے  دنیا  بنائی  ساری

زمیں کی بستی بسائی ساری!

 

یہ کر رہے ہیں ہمیں اشارے

زمین پہ پھول آسمان پہ تارے!

 

خدا کی عظمت کے گیت گاؤ

خدا کی وحدت کے گیت گاؤ!

 

خدا کی کرتے ہیں حمد سارے

زمیں پہ پھو ل آسماں پہ تارے!

 

                                                                 کتاب کا نام :   پھولوں کے گیت

                                                                شاعر کا نام :   اختر شیرانی

                                                                 پیشکش      : شعبۂ تحریر و پیشکش تبیان


متعلقہ تحریریں: 

 صبح عمل

 تین سوالوں کا ایک جواب