• صارفین کی تعداد :
  • 4860
  • 6/28/2008
  • تاريخ :

صبح عمل 

صبح سویرے

سياہي   نے   آخر   كو    دم    توڑ   ڈالا
شفق     سے    اجاگر    ہوا    ہے   اجالا

 

دھندلكوں  ميں  اك  جان  سي آ گئي  ہے

فضا  كس   قدر  دل  نشيں  ہو  گئي   ہے

 

چلي   آ   رہي    ہے     ہوا     تازہ    تازہ

ہر   اك   چيز   عنوان    ہے   تازگي   كا

 

شجر جھومتے ہيں عجب بے خودي  ميں

نيا   ولولہ   ہے   ہر  اك   پنكھڑي   ميں

 

كئي  پھول   چٹخے،  شگوفے  كھلے  ہيں

چمن   بوئے  گل  سے  مہكنے  لگے  ہيں

 

حسيں   كھيتياں   لہلہاتي   ہيں  ديكھو

كہ  جشن  سحر يوں  مناتي  ہيں  ديكھو

 

پرندے  بھي  اب  گيت  گانے  لگے  ہيں

يہ   وقتِ   عمل   ہے،  بتانے   لگے   ہيں

 

عمل  سے  ہي  تسخير  ارض و سماں  ہے

ظہور ِ  سحر   بھي   عمل   كا  نشاں   ہے

 

اٹھو  خوابِ  غفلت  سے اے  سونے والو

مقدر    كو    ہمت    كا    تابع    بنا    لو

 

                                                                        

محمد شاہد فيروز

پیشکش  :  شعبہ تحریرو پیشکش تبیان


متعلقہ تحریریں:

  لطیفے

 پھیلیاں

 نبي کريم کي خوش مزاجي

خوشبختی اور سعادت

 نيت کا فرق