• صارفین کی تعداد :
  • 2278
  • 4/13/2013
  • تاريخ :

غبار خاطر کيوں لکهي گئي ہوئي ؟

ابوالکلام

غبار خاطر

ہندوستان پر انگريزوں کے سياسي اقدار کے خلاف ، پچاس ساله جد وجہد کا نقطه عروج ايک تحريک تها جو ( ہندوستان چهوڑدو ) کہا گيا ہے .8 اگست 1942ء کو انڈين نشنل کانگريس کا خاص اجلاس بمبئي ميں منعقد ہوا .اس وقت دوسري عالمي جنگ اپنے پورے شباب پر تهي اور انگريز ايسي تحريک سے صرف نظر نہيں کر سکتا تها اس ليے حکومت نے حفظ ما تقدم کے طورپر سب انتظام کر رکهے تهے . اس زمانے ميں مولانا ابوالکلام آزاد کانگريس کے صدر تهے .

9 اگست کو علي الصباح حکومت وقت نے تمام سرکردوں کو بستروں سے اٹها کر حراست ميں لے ليا اور ملک کے مختلف مقامات پر نظربند کرديا .

مولانا آزاد اور ان کے بعض دوسرے رفقا احمد نگر کے قلعے ميں رکهے گئے تهے .مولانا آزاد کا يه سلسله قيد و بند کوئي تين برس تک رہا .

اپريل 1945 ء ميں وه احمد نگر سے بانکوڑا جيل ميں منتقل کرديے گئے اور يہيں سے بالآخر 15 جون 1945 ء  کو رہا ہوئے. اسي نظربندي کے زمانے کا ثمره يه  کتاب (غبار خاطر ) ہے.ان کے حلقه ارباب  ميں صرف ايک ہستي ايسي تهي جو علم کے مختلف اصناف ميں يکسان طورپر دلچسبي لے سکتي تهي. يه نواب صدريار  جنگ بہادر  ، مولانا حبيب الرحمان خان شرواني مرحوم کي ذات تهي . انہوں نے عالم خيال  ميں  ان کو مخاطب تصور کرليا  اور  پهر جب کبهي جو کچھ بهي ان کے خيال  ميں آتا گيا اسے بے تکلف  حواله قلم کرتے گئے انهيں مضامين يا خطوط کا مجموعه يه کتاب ہے.

غبار خاطر کيا ہے ؟

غبار خاطر مولانا آزاد مرحوم کي سب سے آخري تصنيف ہے جو ان کي زندگي ميں  شائع ہوئي.

يه تمام مکاتيب نج کے خطوط تهے اور اس خيال سے نہيں لکهے گئے تهے که شائع کيے جائے ، ليکن رہائي کے بعد مولوي  احمد اجمل خان صاحب مصر ہوئے که انہيں ايک مجموعه کي سکل ميں شائع کرديا جائے اور يه خطوط جس حالت ميں قلم برداشته لکهے ہوئے موجود تهے اسي حالت ميں طباعت کے ليے دے ديے گئے ہيں. نظر ثاني کا موقع بهي نہيں ملا .

نسخه شوق به شيرازه نه گنجد زنہار                                                                      

 بگزاريد که اين نسخه مجزا ماند                                                                          

  ( ابوالکلام )

غبار خاطر پہلي مرتبه مئي 1946 ء چهپي تهي اسے جناب محمد اجمل خان نے مرتب کيا تها اور 24 خطوں پر مشتمل ہے .

کہنے کو تو يه خطوط کا مجموعه ہے ليکن حقيقت يه ہے دو ايک کو چهوڑ کر ان ميں سے مکتوب کي صفت کسي ميں نہيں پائي جاتي .

يه در اصل چند متفرق مضامين ہيں جنہيں خطوط کي شکل دے دي گئي ہے .يوں معلوم ہوتا ہے که مرحوم کچھ ايسي باتيں لکهنا چاہتےتهے جن کا آپس ميں کوئي تعلق يا مربوط سلسله نہيں تها .

يه ممکن ہے  که اس طرح که مضامين لکهنے کا خيال ان کے دل ميں شہره آفاق فرانسيسي مصنف اور فلسفي چارلس لوئي مونٹسکيو کي مشہور کتاب ( فارسي خطوط) سے آيا ہو .

ليکن وه ان باتوں کو الگ الگ مضامين کي شکل ميں بهي قلمبند نہيں کرنا چاہتے تهے کيوںکه اس صورت ميں باہمي تعلق کے فقدان کے باعث بعد کو انہيں ايک شيرازے ميں يکجا کرنا آسان نه ہوتا . ايسي ليے انہوں نے کسي شخص واحد کے نام خطوط کي شکل ميں مرتب کرديا جائے.