• صارفین کی تعداد :
  • 1216
  • 9/2/2012
  • تاريخ :

خوش ذوق امرائے  عہد کي بدولت مثنوي کے  مطالعہ کا شوق اور بھي بڑھ جاتا ہے

مولانا رومی

ايسا معلوم ہوتا ہے  کہ شاہجہاں  کے  آخري زمانے  ميں  مطالعہ مثنوي کي تحريک پہلے  سے  زيادہ زور سے  اٹھي اور آہستہ آہستہ اس ميں  اتني شدت اور وسعت پيدا ہو گئي کہ اورنگ زيب کے  زمانے  ميں  مثنوي ہي وقت کي محبوب ترين کتاب بن جاتي ہے- اس کي بے  شمار شرحيں  لکھي جاتي ہيں ،ترجمے  ہوتے  ہيں  اور انتخابات تيار کئے  جاتے  ہيں- اس کے  علاوہ درس ميں  اس کو مرکزي اہميت حاصل ہو جاتي ہے- اس کے  اشعار مجالس اور محافل ميں  بڑے  ذوق و شوق سے  پڑھے  جاتے  ہيں  اور اس سے  واعظ اور خطيب تذکر ہ و تلقين کا کام لينے  لگتے  ہيں- غرض اس زمانے  ميں  اس کو نہايت ہمہ گير مقبوليت ملتي ہے- اور عام و خاص سب اس کے  مطالعہ سے  لطف و سعادت حاصل کرتے  ہيں-

عہد عالمگيري کے  مثنوي شناسوں  ميں  دو اہم شخص ايسے  تھے  جن کي مثنوي داني کي اس عہد کے  مو رخوں  نے  بڑي تعريف کي ہے- ان ميں  سے  ايک عاقل خان رازي (مير عسکري)تھے  جو اس زمانے  کے  اچھے  شاعروں اور اديبوں  ميں  شمار کئے  جاتے  تھے  اور دوسرے  انہيں  کے  داماد سيد شکر اللہ خان خاکسار تھے  جن کي شرح مثنوي خاصي شہرت رکھتي ہے- عاقل خان رازي کے  متعلق مآثر امراء ميں  لکھا ہے  

’در حلِ ّ تد قيقاتِ مثنويِ  مولائے  روم خودرايگانہ مي دانست !‘

اور نواب شکر اللہ خان کے  متعلق شير خاں  لودھي نے  مرأۃ الخيال ميں  ہم کو يہ اطلاع دي ہے  کہ :

’کمترين شاگرد انش بہ مثنوي داني معروف وادنيٰ تلميذ ش بصفاتِ صوفيہ مو صوف!‘

ان خوش ذوق امرائے  عہد کي بدولت مثنوي کے  مطالعہ کا شوق اور بھي بڑھ جاتا ہے - چنانچہ اس زمانے  ميں  اور اس کے  بعد مثنوي کا علم ، شائستگي اور اوصافِ مجلسي کا لازمي عنصر بن جاتا ہے- جس کے  زير اثر شرحوں  اور فرہنگوں  کا سلسلہ بدستور قائم رہتا ہے- اس موقع پر اس عہد کي ان سب کتابوں  کا تذکرہ جو مثنوي سے  متعلق ہيں  دشوار بھي ہے  اور بے  ضرورت بھي - البتہ ان ميں  سے  سب سے  قابل ذکر کتابوں  کے  نام لکھے  جا سکتے  ہيں- مثلاً محمد عابد کي الغني (1100ھ) شاہ افضل الہٰ آبادي کي ’حل مثنوي‘ (1104ھ) شکر اللہ خان کي شرح مثنوي ، خواجہ ايوب پارسا لاہوري کي شرح  مثنوي (1120ھ) ولي محمد اکبرآبادي کي مخزن الاسرار (1149ھ) خليفہ خويشگي قصوري کي ’اسرار مثنوي‘ وغيرہ ان سب کے  آخر ميں  ملا عبد العلي بحر العلو م(متوفي 1819ء/1235ھ) کي شرح مثنوي آتي ہے  جس پر مطالعہ مثنوي کا پچھلا دور ختم ہو جاتا ہے  اور کچھ دير کے  بعد نئے  حالات کے  تحت مثنوي سے  استفادہ کي جديد (اور کئي معنوں  ميں  پچھلي تحريکوں  سے  مختلف) تحريک پيدا ہوتي ہے-

اس تحريک کا آغاز شبلي نعماني کي کتاب ’سوانح مولانا روم ‘ سے  ہو ا جس کي اشاعت سے  حکمتِ رومي کا (جديد زمانے  ميں  )پہلا علمي تعارف ہوا- اس علمي تعارف سے  مطالعۂ رومي کي شاہراہيں  بہت کشادہ ہوئيں- مگر اس اثنا ميں  قدرت نے  ايک اور دانائے  راز ايسا پيدا کيا جس نے  مثنوي کو ايک نئے  عصر کي تخليق کا وسيلہ اور ايک نئي زندگي کي تشکيل کا ذريعہ بنا کر اس کو مستقبل کي ’عصر آفريں  کتاب ‘بنا ديا -

مطالعہ مثنوي کي اس طويل تاريخ ميں  کم و بيش پانچ اہم سنگ ميل ہمارے  سامنے  آتے  ہيں :- اوّل  خوارزمي کي ’جواہرالاسرار‘ جو 840ھ ميں  تصنيف ہو ئي - دوم عبداللطيف عباسي کي تصنيفات جو شاہجہاں  کے  زمانے  سے  متعلق ہيں- سوم ملا  بحرالعلوم(متوفي 1819ء/ 1235ھ) کي شرحِ مثنوي - چہارم شبلي کي سوانحِ مولانا روم- پانچواں  اقبال کا استفادۂ رومي - تاريخ پر نظر ڈالنے  سے  معلوم ہوتا ہے  کہ مطالعۂ رومي کے  يہ پانچوں  سنگ ميل تاريخ اسلامي کے  نہايت پر اضطراب زمانوں  سے  متعلق ہيں  اور يوں  مثنوي خود بھي ايک ايسے  پر آشوب زمانے  کي يادگار ہے  جس ميں  خدا پر ايمان و يقين اور انسان پر اعتقاد و اعتماد حملۂ تاتار کے  سيلاب ميں  خس و خاشاک کي طرح بہہ گيا تھا - اور يہ ايک ايسا قيامت خيز واقعہ تھا جس نے  تہذيب کے  پچھلے  نقوش کو تقريباً مٹا ديا تھا - گويا رومي کي تصنيف کا زمانہ ايک خلا اور ابہام کا زمانہ تھا - جس ميں  روحيں  کسي نئي منزل کي تلاش ميں  بھٹک رہي تھيں  اور ذہن انساني کسي نئي دنيا کي جستجو ميں  آوارہ و سر گرداں تھا - ايسے  روحاني انتشار اور ذہني خلفشار کے  زمانے  ميں  مثنوي ظہور ميں  آئي - اس ميں  وہ جذب و سرور ، وہ وجد و حال اور وہ بيخودي و مستي تھي جس کي اس زمانے  کي پريشان و سر گرداں  روحوں  کو ضرورت تھي - کيونکہ لوگ عام طور سے  خدا ، انسان اور کائنات تينوں  کا اعتقاد کھو بيٹھے  تھے- ايسي حالت ميں  رومي نے  جب اپنا نغمہ عشق سنايا تو اس سے  اعتقاد کي بجھي ہوئي چنگاريوں  ميں  پھر گرمي پيدا ہوئي اور حيات نے  اپني بکھري ہو ئي کڑيوں  کو پھر سے  جوڑا - غرض مثنوي کے  پيغام اور اس کے  بيا ن کي يہ مسلم خصوصيت معلوم ہو تي ہے  کہ اس سے  بے  يقيني ، جمو د اور روحاني بے  اعتقادي کے  ہر زمانے  ميں  احيائے  جديد کا  کام ليا گيا-  جس کا سبب يہ ہے  کہ رومي کے  کلام ميں  ڈھارس بندھانے  اور اميد پيدا کرنے  کي خاص صلاحيت پائي جاتي ہے- لہذا جب بھي روح کو اميد کے  آب بقاء کي ضرورت ہو ئي ہے  رومي کے  فيضان عام ہي سے  اس کي پياس بجھائي گئي ہے-

حملۂ تاتار کي طرح تيمور کي ترک تازيوں کا زمانہ بھي انساني شرافتوں کے لحاظ سے تاريکي کا زمانہ تھا - اس کي ظلمتوں ميں خوارزمي نے پھر رومي کي شمع جلائي - اسي طرح ہندوستان ميں اکبر کا زمانہ اگر چہ سياسي عروج کا زمانہ تھا - مگر عقليّت نے وجدان و يقين کے سر چشمے خشک کر ديے تھے -

جہانگير کے  عہد ميں  رومانيّت کي ايک لہر ضرور پيدا ہوئي  جس ميں  مقبول ترين ادبي ہيرو حافظ بنے- مگر يہ رومانيّت لذت اندوزي اور رو بہ انحطاط مسرت کوشي ميں  اعتقاد رکھتي تھي - اس لئے  روحاني تسکين کيلئے  کسي اور آبِ زندگي کي ضرورت پيدا ہوئي- چنانچہ شاہجہاں   اور اور نگ زيب کے  زمانے  ميں  پھر مثنوي کا غلغلہ بلند ہوا- جس نے  سکون و تسکين کے  سامان پيدا کئے- غرض ہر زمانۂ زوال ميں  تھوڑے  تھوڑے  وقفہ کے  بعد رومي کي طلب ہوتي رہي- يہاں  تک کہ وہ زمانہ آ گيا جس ميں  اقبال نے  دنيا کے  سامنے  رومي کے  پيغام کي نئي تعبير پيش کي-

تحرير: ڈاکٹر سيد عبداللہ

پيشکش : شعبۂ تحرير و پيشکش تبيان


متعلقہ تحريريں:

رومي کے کلام ميں سعدي کي فصاحت موجود نہيں