• صارفین کی تعداد :
  • 2623
  • 4/22/2008
  • تاريخ :

اپنی جولاں گاہ زیر آسماں سمجھا تھا میں 

اقبال

اپنی جولاں گاہ زیر آسماں سمجھا تھا میں

آب و گل کے کھیل کو اپنا جہاں سمجھا تھا میں

 

بے حجابی سے تری ٹوٹا نگاہوں کا طلسم!

اک روائے نیلگوں کو آسماں سمجھا تھا میں

 

کارواں تھک کر فضا کے پیچ و خم میں رہ گیا

مہر و ماہ و مشتری کو ہم عناں سمجھا تھا میں

 

عشق کی اکِ جست نے طے کر دیا قصہ تمام

اس زمین و آسماں کو بیکراں سمجھا تھا میں

 

کہہ گئیں رازمحبت پردہ دار یہائے شوق

تھی فغاں وہ بھی جسے ضبطِ فغاں سمجھا تھا میں

 

تھی کسی درماندہ رہرو کی صدائے درد ناک

جس کو آواز رحیل کارواں سمجھا تھا میں 

 

                                                                                                        شاعر مشرق علامہ محمد اقبال