• صارفین کی تعداد :
  • 4186
  • 12/30/2007
  • تاريخ :

انسان کي فطرت جستجو و تحقیق

گل آماریالیس

انسان کي روحي صفات ميں سے ايک ،حقائق اور واقعيات سے متعلق اسکي جستجو و تحقيق ھے ۔ يہ صفت ھر انسان ميں اس کے بچپنے ھي سے ظاھر ھو جاتي ھے اور آخر عمر تک جاري رھتي ھے ۔ انسان کي يھي صفت ھے جو اسکو دين سے متعلق مسائل کے بارے ميں تحقيق کرنے پر مجبور کرتي ھے اور اس سے کھتي ھے کہ دين بر حق کي شناخت کے لئے اقدام کرے ۔

آيا عالم غيب يا غير محسوس وجود رکھتاھے ؟ وجود رکھنے کي صورت ميں آيا عالم غيب اور عالم مادي ميں کوئي رابطہ پايا جاتا ھے ؟ رابطہ پائے جانے کي صورت ميں آيا کوئي ايسي غير محسوس ذات ھے جس نے اس مادي دنيا کو خلق کيا ھے ؟

آيا وجود انسان فقط اسي مادي اور محدود زندگي تک ھي محدود ھے يا ايک دوسري زندگي بھي ھے ؟ دوسري زندگي ھونے پر آيا اس مادي و محدود زندگي اور اس دوسري زندگي ميں کوئي رابطہ پايا جاتا ھے ؟ رابطہ ھونے کي صورت ميں وہ کون کون سے عامل ھيں جو دوسري زندگي ميں موثر ھوتے ھيں ؟ اور ايسي کون سي راہ و روش ھے جس کي بنياد پر زندگي کا ايک کامياب اور مناسب دستورعمل حاصل کيا جاسکتا ھے ، ايسا دستور عمل جو انساني کمال و سعادت کيلئے معاون ھو ؟

يہ ايسے سوالات ھيں جو ھميشہ ھر انسان کو ان کے جوابات کے حصول پر اکساتے رھتے ھيں ۔ ايک دوسرا عامل جو انسان کو حقيقت جوئي پر ابھارتا ھے ، يہ ھے کہ انسان ھميشہ يہ چاھتا ھے کہ اسکي خواھشات و ضروريات کي تکميل ھو ۔ ھر چند اسکي يہ خواھشات علمي اور سائنسي پيشرفت کے سائے ميںپوري ھوئي جاتي ھيں ليکن دين کا بھي ان ضروريات کي تکميل اور راہ حق کي نشاندھي ميں اھم کردار ھوتا ھے۔ دين بشر کوبتاتا ھے کہ اسکي کون سي خواھش مناسب ھے اور کون سي نا مناسب ۔ دين انسان کو اس کے حقيقي منافع و مصالح سے آشنا کراتا ھے نيز اسکو نقصانات سے محفوظ رکھتا ھے ۔

خدا شناسي ايک فطري خواھش ھے جس کا سر چشمہ بعض ماھرين نفسيات ”حس ديني “ کو قرار ديتے ھيں ۔ اس حس کو حس تجسس ، حس نيکي اور حس زيبائي کے ساتھ ساتھ روح انسان کے چوتھے بُعد سے تعبير کرتے ھيں ۔ يہ افراد تاريخ اور باستان شناسي کي بنياد پر دعويٰ کرتے ھيں خدا پرستي ھميشہ بني آدم کا خاصہ رھا ھے ۔ يھي عموميت ھے جس کي بنا ء پر کھا جا سکتا ھے کہ خدا پرستي ايک فطري شئي ھے ۔