• صارفین کی تعداد :
  • 2308
  • 2/1/2011
  • تاريخ :

معاشرے ميں تلاوت قرآن کے اثرات

قرآن

معاشرے ميں تلاوت قرآن کے اثرات

آج اگرہم معاشرے کي قرآني تحريک کو زندہ رکھنا چاہتے ہيں تو لازم اور ضروري ہے کہ عوام کے درميان قرآن مجيد بھي بشکل تلاوت زندہ رہے۔ يہ کافي نہيں ہے کہ مجلس شوريٰ اسلامي حکومت اسلامي اور ان سب سے بڑھ کر حضرت امام امت کے بيان و سخن ميں قرآن مجيد زندہ متجلي رہے اس کے ساتھ ساتھ خود عوام کے درميان بھي قرآن کا زندہ رہنا ضروري ہے۔ ہمارے معاشرے ميں قرآني تحريک اس وقت گزند سے محفوظ ہو گي جب عوام مکمل طور پر قرآن سے آشنا ہو جائيں گے۔ لہٰذا ضروري ہے کہ معاشرے ميں درس قرآن، تلاوت قرآن، معارف قرآن اور علوم قرآن کي نشر و اشاعت کا سلسلہ اسي طرح جاري رہے۔

قرآن کي مجلسوں ميں اضافہ ہو، مختلف ميدانوں ميں اس قسم کے مقابلے منعقد ہوتے رہيں۔ يہ پسنديدہ عمل ہے، عوام کو اس کي قدر کرني چاہئے اور اس قسم کے کاموں ميں بڑھ چڑھ کر حصہ لينا چاہئے۔ جو حضرات تعليم قرآن کي صلاحيت رکھتے ہيں وہ اسے فريضہ سمجھيں۔ مدرسوں اور اسکولوں ميں تعليم قرآن کي بنياد و اساسي درس کي حيثيت ملني چاہئے۔ ہم اپنے آئين ميں عربي زبان کي تعليم کو حکومت جمہوري اسلامي پر فر ض قرار ديا ہے۔ اس کا کيا مقصد تھا؟ آپ کو پتہ ہے کہ دنيا ميں کسي اسلامي ملک ميں ميٹرک تک عربي زبان کي تعليم لازمي نہيں ہے۔ يہ صرف ہمارے قانون کا امتياز ہے۔

کيوں، اس کا مقصد کيا تھا؟

ہميں قرآن کے بغير عربي زبان کي کيا ضرورت ہے؟ عربي اس لئے کہ معزز و محترم ہے کہ وہ زبان قرآن ہے۔ ميں نوجوانوں سے درخواست کرتا ہوں کہ وہ اپنے سن و سال کي قدر جانيں جو حفظ قرآن کے لئے نہايت مناسب ہے۔ قرآن کو حفظ کريں۔ اگر ميرے پاس کوئي معنوي دولت و ثروت ہوتي تو ميں اس کے بدلے حفظ قرآن ک حاصل کرنے کے لئے تيار تھا۔ حفظ قرآن ايک عظيم نعم الٰہي ہے۔ قرآن جس شخص کے ذہن ميں موجود ہے وہ ہميشہ قرآن کے ہمراہ ہے، اسے چاہئے کہ خدا کي عطا کردہ اس عظيم نعمت کے بدلہ ميں خدا کا شکر ادا کرے۔

آج ہمارے نوجوانوں اور بچوں کے لئے ميدان ہموار ہے، حفظ قرآن کے لئے کسي قسم کي رکاوٹ نہيں۔ قرآن کو خود حفظ کيجئے اور اپنے بچوں کو حفظ قرآن پر مادہ کيجئے۔

ولي امر مسلمین حضرت آیت اللہ سید علي خامنہ اي کے خطاب سے اقتباس


متعلقہ تحریریں:

قرآن اور علم

قرآن و سنت کی روشنی میں امت اسلامیہ کی بیداری

”فطرت“ قرآن ميں

تاريخ کي اھميت قرآن کي نظر ميں