• صارفین کی تعداد :
  • 2873
  • 10/31/2009
  • تاريخ :

بلا تحقيق کچھ مت بولو

بلا تحقيق کچھ مت بولو

بلا تحقيق نقل کرنا کا مرض اس قدر پھيل گيا ہے کہ جس سے جو بات سني اس ميں دو چار ملا کر آگے نقل کرديتے ہيں ان باتوں کي حقيقت نہيں ہوتي اور اس ميں بلا تحقيق نقل کرنے کي بدولت ہم کتنے لوگوں پر تہمت لگا ديتے ہيں، کتنے لوگوں کي آبروريزي کرديتے ہيں اور تہمت کا گناہ تو غنيم سے بھي زيادہ سخت ہے حديث ميں اس کو موبقات يعني ہلاک کرنے والے گناہوں ميں شمار کيا گيا۔

عموما غير تعليم يافتہ عورتوں کي عادت بدگماني کي بہت ہوتي ہے اپنے اپنے گمان سے باتيں سوچ کر فلاني کايہ مطلب ہوگا، فلاني نے مجھے جلانے کيلئے کا کيا وغيرہ،پھر اس طرح نقل کرديتي ہيں اور اس فالني کو تو پتہ بھي نہيں ہوتا، اس کا بہت بڑا گناہ ہے، قرآن کريم ميں ہے۔

اے ايمان والوں بہت سے گمانوں سے بچا کرو کيوں کہ بعض گمان گناہ ہوتے ہيں۔

کسي کي بات آپ تک پہنچے اور اس ميں کسي شخص کي بري بات ہو، تو کسي اور کو بتانے کي ضرورت ہي کيا ہے، کسي کي برائي سنن اور کرنا دونوں غيبت ہے اور اگر کسي ضرورت سے سننا ہي پڑے يا کسي کو بتانے کي ضرورت ہوتو پہلے اس کي تحقيق تو کرليں کہ واقعہ اس سے يہ برائي صادر بھي ہوئي ہے يا نہيں کيوں کہ اکثر اوقات لوگوں کو سمھجنے ميں غلطي ہوتي ہے يا دشمني سے ايسي باتيں پھيلا ديتے ہيں۔

قرآن مجيد ميں ايک دوسري جگہ ايسي خبريں پھيلانے والوں کے بارے ميں ارشاد ہے جس کا ترجمعہ يہ ہے۔

اور جب ان کے پاس کوئي خبر امنکييا خوف کي آتي ہے تو اس کو پھيلاديتے ہيں اور اگر وہ اس کو رسول اللہ صلي اللہ عليہ وسلم اور اپنے اکابر کے حوالے کرديتے ہيں جو اس کي بصيرت رکھتے ہيں وہ خود ہي اس کو پہچان ليتے۔

تفاسير ميں آيت کے بارے ميں لکھا ہے کہ آس آيت ميں ان لوگوں کے طرز عمل پر نکير اور ترديد ہے جو باتوں کو ثبوت سے پہلے لے آڑے اور جلدي سے لپک کر ان کو پھيلانے لگتے ہيں، حالانکہ اکثر اوقات وہ صيح بھي نہيں ہوتي ہے۔

حديث ميں آتا ہے کہ جس کسي نے کسي مسلمان پر تہمت لگائي اللہ تعلاي اسکو دوزخ کے پل پر ٹہرائے رکھے گا يہاں تک کہ وہ اپن بات سے صاف ستھرا ہوکر نکل جائے، پاک و صاف ہونے کے دوطريقے ہيں يا تو وہ شخص معاف کردے جس کو تہمت لگائي يا اپني نيکياں اس کو ديکر اس کے گناہ اپنے سر لے کر دزخ ميں جلے۔

اس لئے جہاں تک ہوسکے اپني زبان کو اس قسم کي باتوں سے روکو بلکہ زيادہ باتوں کي عادت ہي نہ ڈالو، جو چپ چاپ رہ نجات پا گيا خوموش رہنے ہي ميں خير ہے، اللہ تعالي ہم کو زبان کي حفاظت کرنے والا بناديں۔


متعلقہ تحریریں :

دانائی کے پھول

کامیاب لوگوں کی باتیں