• صارفین کی تعداد :
  • 2466
  • 7/30/2012
  • تاريخ :

اھل ہدايت و صاحب فلاح

خدا پر ایمان

(( الَّذِينَ يُۆْمِنُونَ بِالْغَيْبِ وَيُقِيمُونَ الصَّلاَةَ وَمِمَّا رَزَقْنَاھم يُنفِقُونَ- وَالَّذِينَ يُۆْمِنُونَ بِمَا اُنْزِلَ اظ•ِلَيْکَ وَمَا اُنْزِلَ مِنْ قَبْلِکَ وَبِالْآخِرَةِ ھم يُوقِنُونَ- اُوْلَئِکَ عَلَي ہُدًي مِنْ رَبِّھم وَاُوْلَئِکَ ھم الْمُفْلِحُونَ))-

”‌جولوگ غيب پر ايمان رکھتے ھيں - پابندي سے پورے اھتمام کے ساتھ نماز ادا کرتے ھيں اور جو کچھ ھم نے رزق ديا ھے اس ميں سے ھماري راہ ميں خرچ بھي کرتے ھيں -وہ ان تمام باتوں پر بھي ايمان رکھتے ھيں جنھيں (اے رسول) ھم نے آپ پر نازل کيا ھے اور جو آپ سے پھلے نازل کي گئي ھيں اور آخرت پر بھي يقين رکھتے ھيں-يھي وہ لوگ ھيں جو اپنے پروردگار کي طرف سے ہدايت کے حامل ھيں اور يھي لوگ فلاح يافتہ اور کامياب ھيں“-

مذکورہ آيت سے درج ذيل نتائج برآمد ھوتے ھيں:

1- غيب پر ايمان -

2- نماز قائم کرنا-

3- صدقہ اور حقوق کي ادائيگي-

4- قرآن اور ديگر آسماني کتابوں پر ايمان-

5- آخرت پر يقين-

غيب پر ايمان

غيب سے مراد ايسے امور ھيں جن کو ظاھري حواس سے درک نھيں کيا جا سکتا، چونکہ ان کو حواس کے ذريعہ نھيں درک کيا جا سکتا لہٰذا ان کو غيبي امور کھا جاتا ھے-

غيب ، ان حقائق کو کھتے ھيں جن کو دل اور عقل کي آنکھ سے درک کيا جا سکتا ھے،جس کے مصاديق خداوندعالم، فرشتے، برزخ، روز محشر، حساب، ميزان اور جنت و جہنم ھے، ان کا بيان کرنا انبياء ، ائمہ عليھم السلام اور آسماني کتابوں کي ذمہ داري ھے-

ان حقائق پر ايمان رکھنے سے انسان کا باطن طيب و طاھر، روح صاف و پاکيزہ، تزکيہ نفس، روحي سکون اور قلبي اطمينان حاصل ھوتا ھے نيز اعضاء و جوارح خدا و رسول اور اھل بيت عليھم السلام کے احکام کے پابند ھوجاتے ھيں-

غيب پر ايمان رکھنے سے انسان ميں تقويٰ پيدا ھوتا ھے، اس ميں عدالت پيدا ھوتي ھے، اور انسان کي تمام استعداد شکوفہ ھوتي ھيں، يھي ايمان اس کے کمالات ميں اضافہ کرتا ھے، نيز خداوندعالم کي خلافت و جانشيني حاصل ھونے کا راستہ ھموار ھوتا ھے-

کتاب خدا ،قرآن مجيد جو احسن الحديث ، اصدق قول اور بھترين وعظ و نصيحت کرنے والي کتاب ھے،جس کے وحي ھونے کي صحت و استحکام ميں کوئي شک و شبہ نھيں ھے، اس نے مختلف سوروں ميں مختلف دلائل کے ذريعہ ثابت کيا ھے کہ قرآن کتاب خدا ھے، جن کي بنا پر انسان کو ذرہ برابر بھي شک نھيں رھتا، قرآن کريم کي بھت سي آيات ميں غيب کے مکمل مصاديق بيان کئے گئے ھيں اور ان آيات کے ذيل ميں پيغمبر اکرم صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم اور ائمہ معصومين عليھم السلام سے بھت اھم احاديث بيان ھوئي ھيں جن کے پر توجہ کرنے سے انسان کے لئے غيب پر ايمان و يقين کا راستہ ھموار ھو جاتا ھے-

پيشکش : شعبۂ تحرير و پيشکش تبيان


متعلقہ تحريريں:

توحید