• صارفین کی تعداد :
  • 2185
  • 8/15/2009
  • تاريخ :

حفيظ جالندهري كي ادبي خدمات- اجمالي جائزه- (حصّہ دوّم)

حفيظ جالندهري

اس كے بعد اكتا دينے والا مشاعره شروع ہوا اور ختم ہونے ہي ميں نہيں آتا تها- سامعين تهكے ہوئے تهے- "ہاہا" شروع ہو چكي تهي رات كا پچهلا پہر تها، موسم خنك تها- سياه آسمان پر بادل كے ٹكرے اور ستارے آنكه مچولي كهيل رہے تهے جب حفيظ صاحب كو پكارا گيا- ان كے ماٹك كے سامنے آتے ہي " رقاصہ" اور ابهي تو ميں جوان ہوں " كي آوازيں بلند ہوئيں، حفيظ نے غالباْ مشرقي افق س اٹهي ہوئي بدليوں كو ديكه ليا تها اس ليے" ابهي تو ميں جوان ہوں " شروع كر دي، يہ نظم ميں نغمہ زار  سے  كئي مرتبہ پڑه چكا تها مگر " وه كالي كالي بدلياں افق پہ ہوگئيں عياں " سے نظم كے اختتام تك جس حظ كي كيفيت ميں نے اس وقت محسوس كي وه مجهے آج تك ياد ہے- پهر ميں لاہور آگيا اور حفيظ كي اكثر كتابيں كالج كي لائبريري سے لے كر پڑه ڈاليں اور متعدد غزليں اور نظميں ياد ہوگئيں- جي ہاں ميں نے ياد كر نے كي كوشش نہيں كي- ان ميں كوئي ايسي خوبي تهي كہ خود بخود ياد ہوجاتي تهيں – ايم اے كا امتحان پاس كرنے كے چند دن بعد ميں گورنمنٹ كالج لاہور ميں لكچرار ہو گيا- يہاں مرزا منور سے پہلے نشست و برخاست اور پهر طويل نشستوں كا سلسلہ شروع ہوا، يہ بهي الگ داستان ہے- ان دنوں ميرزا صاحب ماڈل ٹاؤن ميں  رہتے تهے اور حفيظ صاحب كے بنگلے كي اٹيكسي ميں مقيم تهے- ايك دن ميرزا صاحب اپني ايك غزل مجهے سنا رہے تهے جب اس شعر پر پہنچے:

وہي سمجها ہوں تم جو كچه ہو يارو
تمہيں كيوں بدگماني ہو گئي ہے

   تو ميں نے داد ديتے ہوئے كہا كہ يہ شعر آپ كا ہے يا حفيظ جالندهري كا؟ ميرزا صاحب يہ داد يا بيدادي اسي شام حفيظ كے گوش گزار كي – جس پر انہوں  نے كہا كہ يہ كون شخص ہے جو ميرے شعر كو اتنا سمجهتا ہے؟ اگلے ہي روز حفيظ مجه سے ملنے گورنمنٹ كالج  لاہور تشريف لائے اور يوں ميرا ان سے حاضرانہ نيازمندي كا سلسلہ شروع ہوا-

شاهنامہ اسلام

   حفيظ كے ادبي مرتبے سے كوئي بدقسمت ہي ناواقف ہوگا- جس شخص كا قلم نغمہ زار، سوز و ساز، تلخابہ شيريں اور چراغ سحر جيسے نظموں، غزلوں اور گيتوں كے مجموعے شاهنامہ اسلام جيسي طويل ماہرانے اور مستند ملي نظم ، ہفت پيكر معياري افسانے، چيونٹي نامہ اور نثرانے جيسي اعلي پائے كي نثري كتابيں اردو ادب كي تاريخ كو اعطا كرے اس كے ادبي مقام كے بارے ميں مختلف آرا نہيں ہوني چاہيں مگر مجهے افسوس ہوتا ہے كہ ايك طرف اہل زبان نقاد آج بهي اپني كتابوں ميں ان پر نكتہ چيني كا كوئي موقع هاته سے نہيں جانے ديتے حالانكہ پوري كتاب ميں كسي اور لكهنے والے پر حرف گيري كا وجود نہيں ہوتا تو دوسري طرف ہمارے نوجوان نقّاد اور شاعر حفيظ كو محض تبرك سمجهنا چاہتے ہيں ، حفيظ كے اہل زبان شعرا سے جو معركے هوئے اور ان معركوے ميں جو گهمسان كا رن پڑاده آج تاريخ كا حصہ ہے انہيں معركوں نے ان سے يہ كہلوايا تها:

حفيظ  اہل زبان كب مانتے تهے

بڑے زوروں سے منوايا گيا ہوں

                                                                                                                                                      جاری ہے

کتاب کا نام چند اہم جديد شاعر
مولف ڈاكٹر خواجه محمد زكريا
پیشکش شعبۂ تحریر  و پیشکش تبیان

 


متعلقہ تحریریں :

اسلامي ادب كي ترويج ميں اقبال كا كردار

ایسا کہاں سے لاؤں کہ تجھ سا کہیں جسے

ڈاکٹر ابوالخیر کشفی کی رحلت

پروین شاکر