• صارفین کی تعداد :
  • 4045
  • 2/5/2009
  • تاريخ :

کاغذ کي ناؤ

کاغذ کي ناؤ

 

ہوا   کے زور  سے لہرا   رہی   ہے!!
 جھکولے پر جھکولے کھا رہی  ہے!
مگر اس پر  بھی بہتی  جا  رہی   ہے
ہماری ناؤ  بہتی  جا رہی    ہے !
اگر ہے ناؤ کاغذ   کی تو  کیا  ہے
 بچانے  والا  اس   کا  دوسرا   ہے!
ہمار ی   ناؤ کا  حافظ   خدا   ہے

 ہمار ی ناؤ بہتی   جا   رہی   ہے!

بھنور میں آ گئی شوکت کی کشتی
وہ غوطہ کھا گئی رفعت کی کشتی !
یونہی ٹکرا گئی مد حت کی کشتی
ہمار ی ناؤ بہتی   جا  رہی    ہے!
ہمار ی ناؤ  بھی کیا   ہے   بلا  ہے
 جہازوں کا سا اس  کا  حوصلہ  ہے

بہی جاتی   ہے گو دریا  چڑھا   ہے

وہ اک مکھی نے دیکھو لات ماری
 وہ پلٹا   کھا  گئی   کشتی   ہماری
سنبھل کر پھر ہوئی سیدھی بچاری
 ہمار ی ناؤ  بہتی  جا  رہی   ہے!
وہ اک تنکے نے آ کر اس کو چھیڑا
 لگا  اک  بلبلے  کا   پھر   تھپیڑا
کرے گا  تو  ہی   یارب   پار  بیڑا
ہماری   ناؤ   بہتی  جا  رہی  ہے

 

کتاب کا نام  :   پھولوں کے گیت

شاعر کا نام   :     اختر شیرانی

                پیشکش :   شعبۂ تحریر و پیشکش تبیان