• صارفین کی تعداد :
  • 4516
  • 2/4/2009
  • تاريخ :

چاند نی ر ات

چاند نی ر ات
                                                                       
چاند نی رات کا سماں   دیکھو
 وہ چمک  اٹھا  آسماں  دیکھو
گھا ٹیوں سے نکل رہا ہے چاند
 جنگلوں  پر مچل  رہا ہے  چاند
رو شنی ہو گئی فضاؤں   میں
 نور   بہنے  لگا   ہواؤں   میں
چاند نے چاندنی بچھا دی   ہے
دودھ کی نہر  سی  بہادی  ہے
پتا   پتا   ہے   نور   کی    دنیا
 ذرہ   ذرہ   ہے   نور   کی    دنیا
چمک اٹھیں پہاڑ یاں ساری
 وادیاں   اور  جھاڑیاں   ساری
جنگلوں میں بچھا ہے نورہی نور
 گاؤ ں پر چھا رہا ہے نور ہي نور
خوش نما تارے جھلملاتے ہیں
 نور کے پھول کھل کھلاتے ہیں
نور کی ہے زمین نور کے   گھر
نور کے گھر ہیں نور  کے   منظر
ساری کرنوں بھری فضا چپ ہے
 باغ کی رس بھری ہوا  چپ   ہے
نو ر  اُمنڈنے لگا  فضاؤں  سے
خو شبو آنے لگی ہواؤں   سے
* زہرہ نندیا کے گیت گاتی ہے
چاند نی رات  سوئی  جاتی  ہے

 
کتاب کا نام  :   پھولوں کے گیت

شاعر کا نام   :     اختر شیرانی

               پیشکش :   شعبۂ تحریر و پیشکش تبیان