• صارفین کی تعداد :
  • 4004
  • 2/3/2009
  • تاريخ :

نیا سال

نیا سال

نکھر کیو ں گیا  آج  سو رج  کا    نور
کوئی   بات   تو   آج  ہو  گی   ضرور
خوشی سی ہے چھائی ہو ئی دور  دور
سماں    ہے    سہانا   نئے   سا ل   کا

مبارک ہو آنا نئے سال کا!

زمانے  نے  کا ٹے  مصیبت    کے    دن
یہ راتیں خوشی کی یہ راحت کے دن
 مٹا   رنج ،   آئے   مسرّت    کے    دن
یہ    پیارا   زمانہ    نئے    سال   کا

مبارک ہو آنا نئے سال کا!

جو ہونا  تھا  پچھلے  برس   ہو   چکا
کوئی ہنس چکا  اور  کوئی  رو  چکا
کو ئی پڑھ  چکا  اور  کوئی  سو  چکا
سنا ؤ   فسانہ   نئے  سال  کا

مبارک ہو آنا نئے سال کا!

نئے سال  کیا   کر   دکھا ؤ  گے  تم؟
کہو  کس  طر ح  نام  پاؤ  گے  تم؟
 قدم   آگے  کیوں  کر  بڑھاؤ  گے  تم؟
کہ   یہ   ہے    زمانہ  نئے   سال  کا

مبارک ہو آنا نئے سال کا!

دل و جاں سے پڑھنے میں  محنت  کرو !
ہر   اپنے   پرائے    سے   الفت    کرو!
 اِدھر  یا  اُدھر  دھیان  تم  مت   کرو!
یہی     ہے    ترانہ     نئے   سا ل   کا !

مبارک ہو آنا نئے سال کا!

 

کتاب کا نام  :   پھولوں کے گیت

شاعر کا نام   :     اختر شیرانی

                پیشکش :   شعبۂ تحریر و پیشکش تبیان