• صارفین کی تعداد :
  • 1614
  • 11/30/2008
  • تاريخ :

نذر سودا

نیلا گلاب

 

فکر دلداری گلزار کروں یا نہ کروں
ذکرِ مرغان گرفتار کروں یا نہ کروں

 

قصہ سازش اغیار کہوں یا نہ کہوں

شکوہ یارِ طرحدار کروں یا نہ کروں

 

جانے کیا وضع ہے اب رسمِ وفا کی اے دل

وضعِ دیرینہ پہ اصرار کروں یا نہ کروں

 

جانے کس رنگ میں تفسیر کریں اہلِ ہوس

مدحِ زلف و لب و رخسار کروں یا نہ کروں

 

یوں بہار آئی ہے امسال کہ گلشن میں صبا

پوچھتی ہے گزر اس بار کروں یا نہ کروں

 

گویا اس سوچ میں ہے دل میں لہو بھر کے گلاب

دامن و جیب کو گلنار کروں یا نہ کروں

 

ہے فقط مرغِ غزلخواں کہ جسے فکر نہیں

معتدل گرمی گفتار کروں یا نہ کروں 

 

شاعر کا نام : فیض احمد فیض

پیشکش : شعبۂ تحریر و پیشکش تبیان


متعلقہ تحریریں:

میں مرمٹا تو وہ سمجھا یہ انتہا تھی مری

ترے ملنے کو بے کل ہو گۓ ہیں

او میرے مصروف خدا

 اکبر( akbar)

ایک رہگزر پر

 روشنی