• صارفین کی تعداد :
  • 1959
  • 11/25/2008
  • تاريخ :

طوق و دار کا موسم

بہار کا موسم
روش روش ہے وہی انتظار کا موسم
نہیں ہے کوئی بھی موسم، بہار کا موسم

 

گراں ہے دل پہ غمِ روزگار کا موسم

ہے آزمائشِ حسنِ نگار کا موسم

 

خوشا نظارۂ رخسارِ یار کی ساعت

خوشا قرارِ دلِ بے قرار کا موسم

 

حدیثِ بادہ و ساقی نہیں تو کس مصرف

حرامِ ابرِ سرِ کوہسار کا موسم

 

نصیبِ صحبتِ یاراں نہیں تو کیا کیجے

یہ رقص سایۂ سرو و چنار کا موسم

 

یہ دل کے داغ تو دکھتے تھی یوں بھی پر کم کم

کچھ اب کے اور ہے ہجرانِ یار کا موسم

 

یہی جنوں کا، یہی طوق و دار کا موسم

یہی ہے جبر، یہی اختیار کا موسم

 

قفس ہے بس میں تمہارے، تمہارے بس میں نہیں

چمن میں آتشِ گل کے نکھار کا موسم

 

صبا کی مست خرامی تہِ کمند نہیں

اسیرِ دام نہیں ہے بہار کا موسم

 

بلا سے ہم نے نہ دیکھا تو اور دیکھیں گے

فروغِ گلشن و صوتِ ہزار کا موسم

 

شاعر کا نام : فیض احمد فیض

پیشکش : شعبۂ تحریر و پیشکش تبیان


متعلقہ تحریریں:

 میں مرمٹا تو وہ سمجھا یہ انتہا تھی مری

 او میرے مصروف خدا

 ترے ملنے کو بے کل ہو گۓ ہیں

 روشنی