• صارفین کی تعداد :
  • 4498
  • 7/29/2008
  • تاريخ :

حکیم عمر خیام نیشاپوری کی رباعیات کا منظوم اردو ترجمہ-2-

حکیم عمر خیام کا مقبره

چون عہدہ نمی شود کســــی فردا را
حالی خوش دار این دل پر ســــــودا را

 

آنے والے کل کا ذمہ جب نہ کوئی لے ســــــکا

آج کے دن کے لیئے ہی تو خوشی کے گیت گا

 

می نوش بہ ماہتاب ، ای ماہ ، کہ ماہ

بســــــــــیار بتابد و نیابـــد مـــــــــــارا

 

چاندی راتوں میں آئو مے پیئیں کہ پھر یہ چانــد

مــــــــــــدتوں چمکا کرے گا پر نہ ہم کو پائے گا


متعلقہ تحریریں:

مرزا غالب

حیات اللہ انصاری