• صارفین کی تعداد :
  • 2191
  • 6/22/2008
  • تاريخ :

رونقیں تھیں جہاں میں کیا کیا کچھ 

ناصر کاظمی کا دستخط

 

رونقیں تھیں جہاں میں کیا کیا کچھ
لوگ تھے رفتگاں میں کیا کیا کچھ

 

اب کی فصلِ بہار سے پہلے

رنگ تھے گلستاں میں کیا کیا کچھ

 

کیا کہوں اب تمھیں خزاں والو

جل گیا آشیاں میں کیا کیا کچھ

 

دل ترے بعد سو گیا ورنہ

شور تھا اس مکاں میں کیا کیا کچھ 

                  

                                                 شاعر کا نام : ناصر کاظمی

                                                 پیشکش  : شعبۂ تحریرو پیشکش تبیان


متعلقہ تحریریں:

فارسی ادب 

 اردو ادب

 ناول

 افسانے

 طنز و مزاح