• صارفین کی تعداد :
  • 2095
  • 6/17/2008
  • تاريخ :

جو بھی قاصد تھا وہ غیروں کے گھروں تک پہنچا

احمد فراز

جو بھی قاصد تھا وہ غیروں کے گھروں تک پہنچا
کوئی نامہ نہ ترے در بدروں تک پہنچا

 

مجھ کو مٹی کیا تو نے تو یہ احسان بھی کر

کہ مری اک کو اب کوزہ گروں تک پہنچا

 

اے خدا! ساری مسافت تھی رفاقت کیلئے

مجھ کو منزل کی جاہ ہمسفروں تک پہنچا

 

تو مہ و مہر لئے ہے مگر اے دستِ کریم

کوئی جگنو بھی نہ تاریک گھروں تک پہنچا

 

دل بڑی چیز تھا بازارِ محبت میں کبھی

اب یہ سودا بھی مری جان ، سروں تک پہنچا

 

وقت قاروں کو بھی محتاج بنا دیتا ہے

وہ شہِ حسن دریوزہ گروں تک پہنچا

 

اتنے ناصح ملے رستے میں کہ توبہ توبہ

بڑی مشکل سے میں شوریدہ سروں تک پہنچا

 

اہلِ دنیا نے تجھی کو نہیں لوٹا ہے فراز

جو بھی تھا صاحبِ دل ، مفت بروں تک پہنچا

 

شاعر کا نام   :      احمد ‌فراز                

پیشکش  :  شعبہ تحریرو پیشکش تبیان