• صارفین کی تعداد :
  • 1938
  • 3/11/2008
  • تاريخ :

اک سنگ

lonely

اک سنگ تراش جس نے برسوں

ہيروں کي طرح صنم تراشے

آج اپنے صنم کدے ميں تنہا

مجبور نڈھال زخم خوردہ

دن رات پڑا کراہتا ہے

چہرے اجاڑ زندگي

لمحات کي ان گنت خراشيں

آنکھوں کے شکتہ مرکدوں ميں

روٹھي ہوئي حسرتوں کي لاشيں

سانسوں کي تھکن بدن کي ٹھنڈک

احساس سے کب تلک لہو لے

ہاتھوں ميں کہا سکت کہ بڑھ کر

خود ساختہ پيکروں کے جھولے

يہ زخم طلب يہ نامرادي

ہر بت کے لبوں پہ ہے تبسم

اے تيشہ بد ست ديوتائو

انسان جواب چاہتا ہے

 

فراز احمد فراز