• صارفین کی تعداد :
  • 2094
  • 3/11/2008
  • تاريخ :

اس سے پہلے

mountain

اس سے پہلے کہ بے وفا ہوجائيں

کيوں نہ اے دوست ہم جدا ہو جائيں

 

تو بھي ہيرے سے بن گيا تھا پتھر

ہم بھي جانے کيا ہو جائيں

 

تو کہ يکتا بے شمار ہوا

ہم بھي ٹوٹيں تو جا بجا ہوجائيں

 

ہم بھي مجبوريوں کا عذع کريں

پھر کہيں اور مبتلا ہو جائيں

 

ہم اگر منزليں نہ بن پائے

منزلوں تک کا راستہ ہو جائيں

 

دير سے سوچ ميں ہيں پروانے

راکھ ہو جائيں يا ہوا ہوجائيں

 

اب کے گر تو ملے تو ہم تجھ سے

ايسے لپٹيں کہ قبا ہو جائيں

 

بندگي ہم نے چھوڑ دي فراز

کيا کريں جب لوگ خدا ہوجائيں

 

فراز احمد فراز

 

 

 

متعلقہ تحریریں:

اب کے ہم بچھڑے 

اک سنگ    

خوابوں کو باتيں کرنے دو    

ديکھو جيسے ميري آنکھيں   

برسوں کے بعد    

رنجش ہي    

اب کے ہم بچھڑے تو شايد کبھي خوابوں ميں مليں   

امامت  

يہ عالم شوق   

کٹھن ہے راہ  

عقل و دل (نظم)