• صارفین کی تعداد :
  • 1902
  • 3/11/2008
  • تاريخ :

برسوں کے بعد

peacock

برسوں کے بعد ديکھا شخص دلربا سا

اب ذہن ميں نہيں ہے پرنام تھا بھلا سا

 

ابرو کچھے کچھے سے آنکھيں جھکي جھکي سي

باتيں رکي رکي سي، لہجہ تھکا تھکا سا

 

الفاظ تھے کہ جگنو آواز کے سفر ميں

بن جائے جنگلوں ميں جس طرح راستہ

 

خوابوں ميں خواب اس کے يادوں ميں ياد اس کي

نيندوں ميں گھل گيا ہو جيسے کہ رتجگا سا

 

پہلے بھي لوگ آئے کتنے ہي زندگي ميں

وہ ہر طرح سے ليکن اوروں سے تھا جدا سا

 

اگلي محبتوں نے وہ نامرادياں ديں

تازہ رفاقتوں سے دل تھا ڈرا ڈرا سا

 

فراز احمد فراز

 

متعلقہ تحریریں:

اب کے ہم بچھڑے 

اک سنگ     

اس سے پہلے   

خوابوں کو باتيں کرنے دو    

ديکھو جيسے ميري آنکھيں   

رنجش ہي    

اب کے ہم بچھڑے تو شايد کبھي خوابوں ميں مليں   

امامت  

يہ عالم شوق   

کٹھن ہے راہ  

عقل و دل (نظم)