• صارفین کی تعداد :
  • 5135
  • 2/26/2008
  • تاريخ :

ضرورت وجود امام

 موضوع امامت اپني اھميت اور خصوصيت کي بنا پر ھميشہ شيعہ اور اھل سنت کے درميان بحث و گفتگو کا موضوع رھا ھے. شيعہ علماء اور دانشمندوں نے اپنے مخصوص عقائد کے اثبات کے لئے بے شمار کتابيں تاليف کي ھيں جن ميں ھزارھا دلائل و براھين کا ذکرکيا گيا ھے کہ اگر يھاں اجمالي اور سرسري طور پر بھي انکا ذکر کيا جائے تو يہ مباحث نھايت طويل ھو جائيں گے .

امامت سے مربوط مباحث دو حصوں ميں تقسيم کئے جاسکتے ھيں: پھلا حصہ، اصل ضرورت وجود امام کے اثبات سے متعلق ھے اور دوسرا قرآن اور روايات پرمبني متعدد دلائل پر مشتمل ھے کہ جن کے ذريعہ يہ ثابت کيا جاتا ھے کہ حضرت علي بن ابي طالب عليھ السلام اور آپ کے گيارہ فرزند، خداوند عالم کي طرف سے رسول اکرم کے اعلان کے مطابق اس مقام ومنصب کے لئے منتخب ھوئے ھيں.

محمد(ص)

 

 اثبات ضرورت وجود امام

شيعي نقطہ نظر سے، جس طرح نبوت ايک امر لازم وضروري ھے اور حکمت خدا مقتضي ھے کہ انبياء ھدايت بشر کے لئے بھيجے جائيں اسي طرح امامت بھي ايک امر لازم وضروري ھے جس کے بغير راہ سعادت و کمال کي طرف بشرکي ھدايت  نامکمل ھے.

شيعوں کي کتب کلامي ميں اصل ضرورت وجود امام معصوم پر بے شمار عقلي ونقلي دلائل پيش کئے گئے ھيں. يھاں ھم صرف ايک ھي دليل عقلي پر اکتفا کررھے ھيں. يہ دليل پانچ مقدموں پر مشتمل ھے.

 

 1) نبي شناسي ميں گزر چکا ھے کہ حکمت خداوند عالم کے مطابق ضروري ھے کہ ھدايت بشر کے لئے انبياء بھيجے جائيں.

 2) دين اسلام ايسے قوانين واحکام کا مجموعہ ھے جوابدي اور ھميشہ باقي رھنے والا ھے نيز رسول اکرم کے بعد اب کوئي دوسرا پيغمبر نھيںآئے گا.

 

 3) خاتمہ? نبوت فقط اسي صورت ميں حکمت نبوت سے مطابقت رکھتا ھے  جب آخري آسماني شريعت ، بشر کي تمام مادي ومعنوي اور روحاني ضرورتوں کوپورا کرسکتي ھو نيز جس کي بقا کي ضمانت دنيا کے اختتام تک دي جاسکے.

 

 4) اگرچہ خدا وند عالم نے قرآن کريم کوھر قسم کي تحريف و تبديلي سے محفوظ رکھنے کا وعدہ کيا ھے <انا نحن نزلنا الذکر وانا لہ لحافظون>(1) ليکن تمام احکام و قوانين اسلام، قرآن کي ظاھري آيات سے واضح نھيں ھو پاتے ھيں کيونکہ عموماً قرآن مجيد ميں احکام وقوانين کي تفصيل بيان نھيں کي گئي ھے بلکہ ان کي تعليم پيغمبر اکرم کے حوالے کردي گئي ھے تاکہ خدا کے ذريعے عطا کردہ علم کي مدد سے ان کو لوگوں کے لئے بيان کرسکيں.«وانزلنا اليک الذکرلتبين للناس مانزل اليھم»

 

 5) رسول اکرم کي سختيوں ومشکلات سے بھري ھوئي زندگي اور دشوار حالات وشرائط کے پيش نظر آپ کو اتني فرصت و وقت نھيں مل سکا تھا کہ تمام احکام وقوانين کوبالتفصيل بيان فرماسکتے حتي جس قدر بھي آپ کے اصحاب آپ کي تعليمات حاصل کرسکے تھے اس کي بقا کي بھي ضمانت نھيں تھي. يھاں تک کہ آپ ھي کي امت ميں وضو کي کيفيت کے بارے ميں اختلاف پيدا ھوگيا تھا جب کہ سالھا سال آپ کے اصحاب نے آپ کووضوفرماتے ھوئے مشاھدہ کيا تھا. جب اس طرح کے عملي احکام (وہ عملي احکام جو روزمرہ زندگي ميں مسلمانوں کي ضرورت رھے ھيں اور ھيں نيز جن ميں تبديلي و تحريف کي بھي کوئي وجہ سمجھ ميں نھيں آتي) ميں اختلاف پيدا ھوسکتے ھيں تولامحالہ دقيق اور پيچيدہ احکام ميں تحريف و تبديلي کے امکانات کھيںزيادہ ھيں مخصوصاً ايسے احکام و قوانين ميں جو لوگوں کي نفساني خواھشات اور ذاتي مفادات ميں حائل ھوتے ھيں يا رکاوٹ پيدا کرتے ھيں.

 

مذکورہ پانچوں نکات کے مدنظر دين اسلام اسي وقت، دين کامل کے عنوان سے تا ابد بشريت کي تمام ضروريات کو پورا کرسکتا ھے جب اس ميں  معاشرے کي ان مصلحتوںاور مسائل کا کوئي راہ حل پيش کيا گيا ھو جو رسول خدا کي رحلت کے بعد ھي پيدا ھو گئے تھے.

 

اسلام نے اس کا راہ حل خدا کي طرف سے معين شدہ نبي اکرم کے جانشين  کے طور پر پيش کيا ھے ايسا جانشين جو علم لدني کا حامل ھوتا کہ تمام حقائق و احکام ديني کو ان کے تمام پھلوؤں  کے ساتھ بيان کرسکے ساتھ ھي معصوم بھي ھوتا کہ نفساني خواھشات وجذبات اس پر حاوي نہ ھوسکيں. اور وہ دين ميںعمداً يا سھواً تحريف نہ کرسکے نيز رسول اکرم کي روش پرمعاشرے کي تربيت بھي کرسکے اور کمال طلب افراد کو کمال وسعادت کے اعلي. مراتب تک لے جا سکے. ساتھ ھي ساتھ شرائط اجتماعي کے سازگار ھونے کي صورت ميں حکومت وتدبير امور جامعہ بھي کرسکے تاکہ اسلام کے قوانين اجتماعي کي ترويج کے ذريعہ دنيا ميں عدل و انصاف کو پھيلا سکے.

لااله الا الله محمد رسول الله

 علم اور عصمت امام

 اس طرح ختم نبوت اس صورت ميں حکمت الھي کے مطابق ھوگي جب کوئي ايسا امام معصوم نصب و معين کرديا جائے جونبوت کے علاوہ رسول اکرم کي تمام صفات وخصوصيات کا حامل ھو. يھي ضرورت امام پر عقلي دليل ھے جس کے ذريعہ امام کا علم لدني اور عصمت بھي ثابت ھوجاتي ھے.

 

 خدا کي طرف سے امام کا انتخاب و تعين

 جو کچھ بيان کيا جاچکا ھے اس کے ذريعہ امامت سے متعلق شيعوں کے تيسرے عقيدے کو بھي سمجھا جا سکتا ھے جسکا لب لباب يہ ھے کے امام کا خدا کي طرف سے نصب و معين ھونا ضروري ھے کيونکہ فقط خداوند عالم ھي جانتا ھے کہ اس کا کونسا بندہ اس مخصوص علم و عصمت کا حامل ھے اور اس کي وجہ يہ ھے کہ علم اور ملکات نفساني غير محسوس، امور ميں سے ھيں کہ براہ راست بشري تجربہ کے دائرے ميں نھيں آتے ھيں. يہ بھي خيال رکھنا چاھئے کہ عصمت سے مراد فقط يہ نھيں ھے کہ انسان روز مرہ زندگي ميں گناھوں کو انجام نہ دے بلکہ عصمت کي تعريف يہ ھے کہ  انسان تمام شرائط وحالات ميں گناھوں سے مبرّا و پاک رہ سکے اور يہ وہ حالت ھے جو وحي کے علاوہ کسي اور ذريعے سے حاصل نھيں ھوسکتي.

 

علم ودانش سے متعلق بھي يہ وضاحت ضروري ھے کہ ھر چند کسي شخص کي گفتگو يا تحرير سے اس کے علم کي وسعت وگھرائي کا کسي حد تک اندازہ لگايا جاسکتا ھے ليکن اس روش سے قطعاً اطمينان حاصل نھيں کيا جاسکتا کہ وہ جوکچھ کھہ رھا ھے صحيح کھہ رھا ھے.

 

اس کے علاوہ ايک دوسري دليل بھي خدا کي طرف سے امام معصوم کے نصب وتعين پردلالت کيلئے پيش کي جا سکتي ھے اور وہ يہ کہ:

امامت کے وظائف و ذمہ داريوں ميں سے ايک حکومت اور لوگوں پر ولايت ھے اور يہ وہ امور ھيں جو حقيقةً فقط خدا کا حق ھيں. ولي مطلق اور حقيقي حاکم صرف خدا ھے. انسان فقط اس کا تابع اور فرمانبردار ھے. لھذا دو سروں کي اطاعت اور پيروي فقط اور فقط اس صورت ميں جائز اور درست ھوگي جب خداوند عالم ان لوگوں کو اپني طرف سے يھ منصب اور مقام عطا کردے.

 

متعلقہ تحریریں:

امامت(شعر)

 امامت کی تعریف