• صارفین کی تعداد :
  • 3522
  • 12/30/2007
  • تاريخ :

شناخت دين کي اھميت

طبیعت

بشر جس وقت اس بات سے آگاہ ھوتا ھے کہ طول تاريخ ميں ھميشہ ايسے افراد گزرے ھيں جنھوں نے يہ دعويٰ کيا ھے کہ وہ ھدايت بشر کي خاطر خدا کي طرف سے بھيجے گئے ھيں اور ان افراد نے اپنے پيغام کے ارسال و ترسيل ميں ھر طرح کے مصائب و آلام بر داشت کئے ھيں تو انسان خود بخود دين کي تلاش ميں نکل کھڑا ھوتا ھے تاکہ ان پيغمبروں کے پيغام کي حقيقت کي تھہ تک رسائي حاصل کر سکے ۔ مخصوصاً اسے جب ان پيغمبروں کے پيغام ميں سعادت و نعمت ابدي کي بشارت اور عذاب و عقاب کي خبر ملتي ھے تو اسکي تحقيق و جستجو والا بُعد اس کي دوسري صفات پر حاوي ھو جاتا ھے ۔ ايسا آدمي آکر کس بنا ء پر اپني اس جبلي صفت کو کچل سکتا ھے ؟

ھاں ! ممکن ھے بعض افراد اپنے عيش و آرام کي خاطر تحقيق و جستجو سے متعلق زحمات کو قبول نہ کريں يا صرف اس بناء پر کہ دين کو قبول کرنے کي صورت ميں انھيں دين کي طرف سے عائد شدہ بعض پابنديوں کو قبول کرنا پڑے گا ، سرے سے تلاش و شناخت دين سے منحرف ھو جائيں ۔ ليکن ايسے افرادکي مثال ان چھوٹے بچوں کي سي ھے جو دوا کي کڑواھٹ کي بناء پر ڈاکٹر کے پاس جانے سے گريز کرتے ھيں اور آھستہ آھستہ موت سے قريب ھو تے جاتے ھيںکيونکہ ايسا بچے اپنے نفع و نقصان کے ادراک کے لئے مناسب رشدعقلي کا حامل نھيں ھوتے ۔ ليکن ايک عاقل انسان ھميشہ اس جستجو ميں رھتا ھے کہ حقيقي دين کھاں ھے تاکہ دين بر حق اسکي دائمي اور اخروي نعمتوں کو اس کے لئے فراھم کر سکے ۔