• صارفین کی تعداد :
  • 11058
  • 6/21/2016
  • تاريخ :

امام خميني اور اسلامي انقلاب کي جمہوري بنياديں ( حصّہ دوّم )

امام خمینی (رح)


ميں چاہتا ہوں کہ ايران کے اسلامي انقلابي نظام حکومت کي ماہيت کو جمہوري ثابت کرنے سے پہلے اس انقلاب ميں کار فرما ايران کے سياسي عمل کي مختصر تاريخ بيان کروں مگر اس سے بھي پہلے دومسائل کي وضاحت ضروري ہے۔

آج کے دور ميں نظام حکومت کس طرح کا ہونا چاہيے کے بارے ميں اسلام ميں قرآن و سنت ميں صرف رہنما اصول موجود ہيں تفصيلات وجزئيات طے کرنا ہر دور کے اصحاب دانش وبينش، اسلامي مفکرين ،علماءاور عام مسلمانوں پر چھوڑ ديا گيا ہے اس لحاظ سے ہر وہ نظام حکومت جو قرآن وسنت کے رہنما اصولوں کے مطابق يا ان اصولوں کي کسي ممکنہ تعبير کے مطابق ہوگا وہ اسلامي نظام حکومت ہے اس کے برژس ہروہ نظام حکومت جو ان رہنما اصولوں کي خلاف ورزي پر مبني ہو وہ غير اسلامي نظام حکومت ہو گا چاہے اس پر اسلام کي کتني ملمع سازي کي جائے اس اصول کے مطابق ہر وہ نظام جو درحقيقت بادشاہي سے عبارت ہو غير اسلامي نظام حکومت ہے، کيونکہ بادشاہت قرآن وسنت ميں ديے گئے رہنما اصولوں کي صريح خلاف ورزي ہے چاہے اس بادشاہت کو ايمان فروش علماء اور مجتہدين کتنا ہي اسلامي قرارديں اور شاہي فقيہ لاکھ نمائشي بيعت کي رسم ادا کرتے پھريں اسي طرح مثلاً القاعدہ جيسي تنظيموں کا عامة المسلمين کي رضا مندي کے بغير بندوق کي نوک پر قہروجبر سے اسلام يا شريعت کے نام پر کوئي بھي نظام رائج کرنا غير اسلامي ہو گا سيرت سے يہ بات ثابت ہے کہ حکومت ورياست کي تشکيل اور قيام عامة الناس کي عظيم اکثريت کي تائيد پر مبني ہوتا ہے  يہاں تک کہ آنحضرت نے بدر کي اقدامي جنگ کرنے کا حتمي فيصلہ اس وقت تک نہيں کيا جب تک انصار مدينہ کے روسا نے ان کي نمائندگي کرتے ہوئے اس اقدامي جنگ کي کھلے لفظوں ميں تائيد نہيں کي  انصار کي تائيد اور رضا مندي کي ضرورت اس لئے تھي کيونکہ بيعت عقبہ ميں انصار نے دفاعي جنگ ميں سردھڑ کي بازي لگانے کي حامي بھري تھي، مگر اس وقت ان کے ساتھ اقدامي جنگ کي بات نہيں ہوئي تھي  صحيح احاديث ميں نبي پاک نے مسلمانوں پر زبردستي مسلط ہونے والوں پر لعنت کي ہے اور ايسے لوگوں کودوزخي قرار ديا ہے ( جاري ہے )